The news is by your side.
Güvenilir bahis siteleri 2022
betsat
mecidiyeköy escort mecidiyeköy escort etiler escort etiler escort taksim escort beşiktaş escort şişli escort bakırköy escort ataköy escort şirinevler escort avcılar escort esenyurt escort bahçeşehir escort istanbul escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort
mariobet.biz
betwoon kayıt
deneme bonusu veren siteler
canlı casino
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
vip escort Bitlis escort Siirt escort Çorum escort Burdur escort Diyarbakir escort Edirne escort Düzce escort Erzurum escort Kırklareli escort
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
gaziantep escort
gaziantep escort
modabet giriş
ankara escort escort ankara escort
Tipobet365
Canlı Kumar
istanbul evden eve nakliyat
Group of passionate teen angels lick every other Hottie babe Lou Charmelle fucking a black meat Milf Nina Elle gets fucked in dogystyle

اعترافِ جرم‘ مشکل صحیح لیکن ضروری ہے

نا ماننا، کسی بھی فساد کی بنیادی اکائی کہا جائے تو شائد غلط نہ ہو اگر مجھے کوئی بات نہیں سمجھ آئی،  یا مجھ سے کوئی کام نہیں ہو سکتا،تو مجھے کہہ دینا چاہئےکہہ دینے سے بوجھ ہلکا ہوجاتا ہے تھکن کم ہوجاتی ہےیہ وہ اعتراف ہے جس کی کوئی سزانہیں ، میں اس کام کا اہل نہیں ہوں،  ہاں یہ غلطی مجھ سے ہوگئی ہے۔دلوں میں  اورگھروں میں دیواریں جو اٹھتی ہیں ان کی ایک بہت بڑی وجہ یہ نا ماننا یا اعتراف نہ کرنا بھی ہے۔ سب اپنے اپنے ڈھب پر ‘ اپنے اپنے طور سے چلتے رہتے ہیں کہ میں ٹھیک ہوں نہیں ،میں ٹھیک ہوں۔دیواریں اونچی اور اونچی  اور دلوں میں پڑنے والی دراڑ ،خلیج کی شکل اختیارکرتی چلی جاتی ہے۔سب کچھ اس خلیج میں گر کر تباہ ہوجاتا ہے‘گھر تباہ ہوجاتے ہیں‘خاندان تباہ ہوجاتے ہیں ‘ ادارے تباہ ہوجاتے ہیں یہاں تک کہ ملک تباہ ہو جاتے ہیں۔ناماننا ! اناکی پیداوار ہے  اور انا کا بت ہر انسان کے اندر موجود ہے۔کسی کا بت بڑا ہے تو کسی کا چھوٹا مگر ہے جس کی عبادت میں ہم  سب مشغول رہتے ہیں۔نعوذ بااللہ ! کوئی معبود (انا) کو ٹھیس پہنچائے یہ قطعی نا قابلِ برداشت اور ناقابلِ تلافی جرم ٹہرتا ہےجس کی سزا کہ طور پر بر بادی کا عمل شروع ہوتا ہے اورسب کچھ تہہ و بالا خاک کردیتا ہے جبکہ بروقت اعتراف کرنے سے مسائل کھڑے ہونے سے پہلے ہی دم توڑدیتے ہیں۔

روزانہ گھروں میں ، خاندانوں میں ایسے کتنے چھوٹے چھوٹے فساد جنم لیتے ہیں جو کسی نا کسی کو بھینٹ چڑھادیتے ہیں۔۔۔مدتوں بات چیت بند ، شکل نہیں دیکھی جاتی ۔۔۔اورجانے کیا کیا۔۔۔مگر اس فساد کی وجہ جاننے اور اسکے حل پر بات کرنے کا کوئی نہیں سوچتا۔۔۔بات حکومت اور طالبان کی مذاکرات کی ہو یا خاندان میں ہونے والے فساد کی۔۔۔کوئی تیسرا حریف اس سے فائدہ ضرور اٹھا رہا ہوتا ہے۔۔۔آپ اپنے اطراف میں بیٹھے بیٹھے ذہن دوڑائیے۔۔۔کتنے چھوٹے چھوٹے معاملات ۔۔۔سونامی کی شکل اختیار کر جاتے ہیں۔۔۔گھر کا اگر ایک بجلی کا بٹن یا استری کا پلگ خراب ہوجائے اور آپ اسے کسی اور وقت کہ لئے چھوڑ دیں۔۔۔اور وہ وقت آنے سے پہلے ۔۔۔ایک برا وقت کسی حادثے کی صورت اختیار کئے آپکے سامنے کسی چاہنے والے کو سخت تکلیف میں مبتلا کر جائے۔۔۔پھر پچھتاوے کہ سواکچھ نہیں بچتا۔۔۔قابلِ ستائش و تعریف کے لائق عمل پر شاباش دینے سے گریز یا کنجوسی نہیں کرنی چاہئے۔۔۔

اشتہارات سبق آموز پیغامات کی ترسیل کیلئے مرتب دئیے جاتے ہیں جیسے خاموشی کا بائیکاٹ یا جڑو گے تو جانوگے ۔ اس طرح کہ بے تہاشا پیغامات اشتہارات کہ ذریعے آپ تک پہنچ رہے ہوتے ہیں۔آپ کہ پاس ان پیغامات کی اہمیت اس سے بڑھ کر نہیں کے آپ وہ چیز استعمال کرنے لگتے ہیں جس کا اشتہار اچھا لگتا ہے۔ آج سے چودہ سو سال قبل ہمارے پیارے نبی ﷺ نے دنیا کو اسلام کی روشنی سے منور کیااوراللہ کا کلام ،قرآن پاک بطور نسخہِ کیمیا ،مشلِ راہ رہتی دنیا کہ لئے چھوڑ گئے۔مگر ہم نے اس کتاب اللہ کو فقط ثواب کیلئے رکھ لیا ‘ قرآن خوانی کرالی‘  کسی کہ انتقال پر ساٹھ قرآن ختم کروادئیے اور اسکی اہمیت اس سے بڑھ کر نہیں(سچ کڑوا ہوتا ہے کسی دوا کی طرح، جو ہوتی تو کڑوی ہے مگر بیماری دور کردیتی ہے)۔دراصل ہر اشتہار میں کوئی راز کی بات ہوتی ہےجو اس اشتہار کی اصل وجہ ہے۔خاموشی کا بائیکاٹ کو لیتے ہیں‘ آپ اس کسی نظام یا کسی شخصیت کہ خلاف کھڑے ہوجائیے جو غلط ہے اور آواز اٹھائیے یہ اس اشتہار کا اصل مقصد تھا۔مگر کیاہوا۔۔۔اسی طرح قرآن کا کیا مقصد تھا اور ہم نے کیا کیا(سوائے ندامت کہ کوئی جواب نہیں)۔

اگر آپ چاہتے ہیں کہ معاملاتِ معاشرت و زندگی صحیح ڈگر پر چلے تو شروعات اپنے گھر سے کرنا ہوگی۔ہر گھر میں بڑوں کی سربراہی میں نظم و ضبط کہ ساتھ ہفتہ وار یا ماہوار میٹنگ کریں جس میں سب کو ادب آداب ملحوظِ خاطر رکھتے ہوئے اپنی بات کہنے کی اجازت دی جائے۔ تمام امور زیرِ بحث ( برائے اصلاح) لائے جائیں جو کسی خاندان میں نا چاقی نا اتفاقی کا سبب بن سکتے ہیں یا بن رہے ہوں۔جو فرد بھی کچھ کہنا چاہتا ہے کہنے دیجئے اسکی اصلاح ہوگی یا آپ کی۔اگر کسی نے کوئی اچھا عمل کیا ہے تو سب کو ایک زبان ہوکر اسکی حوصلہ افزائی کرنی چاہئے۔ جو غلطی  پر ہے اسے سمجھانا چاہئے کہ اس کا اعتراف کرنا ہمارے فائدے میں ہے۔یہ وہ طریقہ ہے جس پر عمل کرتے ہوئے تمام مسائل احسن طریقے سے حل ہوجائینگے یا اٹھنے سے پہلے ہی دم توڑجائنگے۔۔۔اس عمل سے ہم آہنگی پروان چڑھے گی ۔۔۔نئی نسل کی پرورش میں یہ عمل انتہائی موثر ثابت ہوگا۔۔۔خود سے بنائے گئے غلط تصورات کا قلع قمع ہوگااور بہت سارے امراض سے بھی بچا جائے گا۔

مندرجہ بالا سطور میں جو بحث رکھی گئی اسمیں سب سے ضروری ہے سچ کہ ساتھ اعترافِ جرم کرنا یہ وہ اعترافِ جرم ہوگا جس سے کسی کو سزا نہیں ملے گی بلکہ تعلقات مستحکم ہونگے‘خاندان مستحکم ہونگے‘ ادارے مستحکم ہونگے۔ یہ مضمون یقیناًبہت واشگاف لفظوں میں پیغام دے رہا ہے کہ دلوں میں رکھنے سے دل کہ وہ امراض جنم لیتے ہیں جو لا علاج ہوتے ہیں۔جو بھی بات ہے وہ کیجئے ، کہہ دیجئے‘ اعترافِ جرم ہی سہی مگر کیجئے۔یہ وہ جرائم ہیں جن کی سزا نہیں جزا ہے،  دنیا میں بھی اور انشاء اللہ بعد از مرگ بھی۔

Print Friendly, PDF & Email
شاید آپ یہ بھی پسند کریں