The news is by your side.
betsat
anadolu yakası escort bostancı escort bostancı escort bayan kadıköy escort bayan kartal escort ataşehir escort bayan ümraniye escort bayan
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
maslak escort
istanbul escort şişli escort antalya escort
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
aviator oyunu oyna lightning rulet siteleri slot siteleri
ankara escort escort ankara escort
escort istanbul

پاک فوج کا سولہواں سپہ سالارکون ہوگا؟

 موروثی اورمیراثی  نظام سیاست میں تو ہوسکتا ہے فوج  میں نہیں،فوج میں میرٹ کا سکہ چلتا ہےلیکن جب سپہ سالار کی  تعیناتی کا  معاملہ  ہو تو اس میں سیاسی ملاوٹ کردی جاتی ہے لیکن  یہ ملاوٹ قانونی اور آئینی ہے ، دستور کی شق 243 فو ر  کے تحت سربراہ  حکومت  سپاہ  کا سالار مقرر کرنےکا ذمہ دار ہے ۔کہنے  کو  تو یہ   بہت   آسان  لگتا ہے  لیکن  یہ  پل  صراط  پر  سے  گزرنے  کے مترادف ہے ۔

نوازشریف  ان دنوں  ایک بار پھر  اسی پل  صراط پر سے  گزر  رہے ہیں۔  میاں صاحب  کو اگر اس  پل  کا مستقل  مسافر  کہا   جائے تو غلط نہ ہو گا   1991میں  انہوں نے اسی پل پر  سے گزر کر  آصف  نواز جنجوعہ  کا انتخاب کیا  تھا،  1993 میں   عبدالوحید کاکٹر،1998 میں  پرویز مشرف اور 2013 میں  راحیل شریف کو  بھی اسی   سفر کے بعد  چنا اور  اگر 1999   کے  ضیا الدین  بٹ کو  بھی شامل  کر لیا جائے   تو ہمارے  کشمیری النسل  میاں صاحب کو  یہ  سعادت 5 بار  حاصل ہوئی ہے اور اب وہ  پل کے اس پار  بخیریت جانے کےلئے  چھٹی  بار حالت سفر میں ہیں قوم کو ان کے لئے دعاگو ہونا چاہیے ۔

نئے  چیف کے لئے وزیراعظم نوازشریف کے پاس  کئی  تھری  اسٹارز جنرل  کی لسٹ ہے  لیکن ان میں سے دو کو انہوں نے  29 نومبر  سےقبل  لازمی  فور اسٹار کے عہدوں  پر ترقی  دینی ہے ۔ ایک  چیئرمین  جوائنٹ  چیفس   آف  اسٹاف  اور  دوسرے  آرمی چیف  کےلئے ۔۔۔۔ آرمی کی سنیارٹی  لسٹ کو دیکھیں  تو  ایک   اہم نام  لیفٹیننٹ جنرل  زبیر محمود  حیات  کا  آتا ہے  وہ  جی ایچ کیو میں  چیف   آف  جنرل  اسٹاف  ہیں  اس  سے پہلے وہ  ڈائریکٹر جنرل  سٹرٹیجک  اینڈ پلان  ڈویژن تھے ان کا  تعلق آرٹلری  سے  ہے ان کے والد  میجر  جنرل کے عہدے  سے ریٹائر  ہوئے  جبکہ   لیفٹیننٹ جنرل  زبیر محمود  حیات  کے دو  بھائی  فوج میں ہیں ۔۔ لیفٹیننٹ  جنرل  عمر  محمود  حیات اور   میجر  جنرل  احمد  محمود  حیات۔۔۔۔۔ جرنیلوں کے اس خاندان  میں  فور اسٹار جنرل  بننے  کا قوی امکان ہے  اور  لیفٹیننٹ  جنرل  زبیر محمود  حیات سپہ  سالار کے منصب پر  پہنچ سکتے ہیں تاہم  ایک سوچ ہے کہ  وزیراعظم  نوازشریف  مسلسل  دوسری  بار ایک سا  تجربہ نہیں کرنا چاہیں گے ۔

ملتان   کے  کور کمانڈر  لیفٹیننٹ  جنرل اشفاق  ندیم  بھی فور اسٹار جنرل  بننے کے اہل ہیں  وہ  سی  جی ایس  رہ چکے ہیں اور  ڈی  جی ایم   آئی  اے  کی  حیثیت  سے  انہوں نے  آپریشن  ضربِ   عضب کا  خاکہ  تیار کیا   جبکہ سوات اور شمالی   وزیرستان  میں  دہشت  گردوں کا قلع قمع  کرنے میں ان کا اہم کردار رہا  ہے ۔بری  فوج کے سربراہ کےلئے  جتنی   بھی  آپریشنل  اور  اسٹاف ذمہ داریوں  کی  ضرورت  ہوتی  ہے اس تمام  پر  وہ پورا اترتے ہیں  لیکن ذرائع کے مطابق  وہ سول  قیادت  کی  گڈ  بک میں نہیں ہیں اور اس کی وجہ ان کا مشرف کے  قریب ہونا بتایا جاتا ہے ۔

ایک اور نام  لیفٹیننٹ  جنرل  جاوید  اقبال  رمدے  کور کمانڈر  بہاولپور  کا ہے  وہ  بھی  سوات  آپریشن کا  حصہ  تھے  اور  جی او سی  رہ  چکے ہیں  واشنگٹن میں  فوجی اتاشی  اور سینٹ کام  کے  ساتھ کام  کرنےکا تجربہ ہے  جبکہ  بعض امریکی  سینیٹرز کے ساتھ  بھی ان کےاچھے  تعلقات تھے ان کا  تعلق رمدے خاندان  سے ہے   جی ایچ  کیو  حملے میں ان کے  ایک رشتہ  دار  بریگیڈیئر انوار الحق  رمدے  شہید  ہو ئے تھے ۔نوازشریف  سےزیادہ  شہبازشریف  سے قربت،امریکی  عنصر اور سیاسی  خاندان  سے تعلق  ان کے   فور اسٹار جنرل  بننے کی  راہ میں رکاوٹ خیال  کئے جا رہے ہیں ۔

سنیارٹی  لسٹ میں  ایک  اہم  ترین نام  لیفٹیننٹ  جنرل  قمر  جاوید  باجوہ  کا  ہے ان کا  تعلق  بلوچ  رجمنٹ سے ہے ان دنوں   وہ   جی ایچ  کیو میں  انسپکٹر  جنرل   ٹریننگ  اینڈ  ایلویلشن  ہیں ، یہ   وہی عہد ہ  جس پر  جنرل  راحیل شریف   آرمی چیف بننے سے  پہلے کام  کر رہے  تھے ۔2014 کے دھرنے کے  دوران ٹین کور کی کمان  انہی کے پاس  تھی۔   ان کی  لائن  آف  کنٹرول  کی صورتحال پر  گہری  نظر  اور وسیع   تجربہ ہے۔ جبکہ  غیر سیاسی  خاندان ہونے کی  وجہ سے  وزیراعظم  کو انہیں  نظر انداز کرنا  بالکل  آسان نہیں ہو  گا ۔

مذکورہ  شخصیات  میں  سے لیفٹیننٹ  جنرل  زبیر محمود  کی مدت  ملازمت  جنوری  2017 میں  ختم  ہو  جائے گی         جبکہ لیفٹیننٹ  جنرل   اشفاق  ندیم ، لیفٹیننٹ  جنرل   جاوید اقبال رمدے اور لیفٹیننٹ  جنرل   قمر  جاوید  باجوہ  اگست  2017 میں سبکدوش  ہو جائیں  گے  آرمی  چیف  جنرل  راحیل شریف 29 نومبر 2016 کو  ریٹائر  ہو رہے ہیں  اسی روز  چیئرمین  جوائنٹ   چیفس   کی  بھی مدت ملازمت  پوری ہو  جائے گی  ایسے میں  وزیراعظم کو   دو اعلیٰ  ترین  جرنیلوں  کا انتخاب   کرنا ہے۔

ویسے  تو  نوازشریف نے  الیکشن  2013 کے بعد  ہی جنرل  اشفاق پرویز کیانی  کے  بعد  کے  آرمی چیف کے متعلق   سوچنا  شروع کر دیا  تھا  اس سلسلے  میں  انہوں نے  قریبی  ساتھیوں  سے  صلاح مشورے  بھی کئے  تاہم  جنرل  راحیل  شریف کی  تقرری کا اعلان انہوں نے  کمان  سنبھالنے کی   تقریب سے دو روز  پہلے  27 نومبر 2013 کو کیا  تھا ( اتفاق سے جسٹس  تصدق  حسین  جیلانی کو  بھی انہوں نے اسی  روز  چیف   جسٹس بنانےکا اعلان کیا  تھا ) تاہم  اس  بار  صورتحال  مختلف ہے  حکومت  کی  آئینی مدت  ختم ہونے میں   ڈیڑھ سال  رہ  گیا ہے  اوروہ چاہیں  گے کہ  پیپلز پارٹی کی طرح  ن لیگ بھی پانچ سال   پورے کرے۔

اس کے  ساتھ  جنرل راحیل  شریل کی  قیادت   میں دہشت  گردوں کا ناسور  کافی  حد تک  ختم ہو چکا  ہے  جبکہ  جنرل راحیل  خود  بھی  ملازمت میں  توسیع کے  حق میں نہیں  اس سلسلےمیں  ان کی طرف  سے 25 جنوری  کو واضح  طور پر  اعلان  بھی کیا  گیا تھا ۔۔  جنرل راحیل شریف مطالعہ  ،شکار اور  تیراکی کے  شوقین ہیں  اور امید ہے کہ 29 نومبر  کے  بعد ان کازیادہ  وقت ان  ہی مشاغل میں  گزرے گا ۔ تاہم  ایک مودی کی خر  دماغی ہے  جس کی وجہ سے  ایل او سی  اور  ورکنگ   باؤنڈری  کی  صورتحال  کشیدہ ہے  ورنہ کوئی اور  بڑی  وجہ   جنرل  راحیل شریف کی  ملازمت میں  توسیع کی نظر  نہیں  آتی  باقی  حکومت  تحریک ِانصاف کے دھرنے کا دھنیا جتنامرضی  گھول کر قوم کو  پلا دے نقصان بہرحال  حکومت کا ہی  ہو  گا ۔

ن لیگ  کسی  نئی نئی  بیوہ  کی طرح  میرٹ  کا بین  تو خوب  کرتی پھرتی  ہے  تاہم اس کا  اطلاق  ہوتا  بھی نظر  آنا چاہئے  وزارت  دفاع  کی طرف سے   بھجوائے جانے والی  فائل  میں وزیراعظم کی  نظر  لیفٹیننٹ  جنرل  زبیر اور  لیفٹیننٹ  جنرل  باجوہ  کے نام  پر  تو  بار بار  پڑے گی  اس کے باوجود  میاں  صاحب کو اگر قوم کا میاں  بننا  ہے  تو انہیں اپنا  بندہ  والی  ذہنیت  کو  ترک  کرکے اچھوں میں  سے اچھا  ترین  کا انتخاب کرنا ہو گا ،بھلے  سولہویں آرمی چیف کے نام کا اعلان  کمان کی تبدیلی  کی تقریب سے  ایک روز پہلے ہی کردیں !۔

Print Friendly, PDF & Email