The news is by your side.
betsat
anadolu yakası escort bostancı escort bostancı escort bayan kadıköy escort bayan kartal escort ataşehir escort bayan ümraniye escort bayan
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
maslak escort
istanbul escort şişli escort antalya escort
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
aviator oyunu oyna lightning rulet siteleri slot siteleri
ankara escort escort ankara escort
escort istanbul

ملکی خزانہ خالی برتن کی طرح بج رہا ہے

ملک میں ڈالر کی اونچی پرواز جاری ہے ، فی ڈالر کی قیمت تقریباً پاکستانی 125 روپے میں ہے ملک میں زر مبادلہ کے ذخائر میں مسلسل کمی ہورہی ہے صرف ڈالر کی قیمت میں اضافے کی وجہ سے ہمارے غیر ملکی قرضوں میں 4 ارب ڈالر کا آضافہ ہوگیا ہے

ایک طرف ڈالر کی پرواز جاری ہے تو دوسری جانب قرض کے بوجھ میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے جبکہ سالانہ 15 ارب ڈالر ملک سے باہر بھجوائے جارہے ہیں ، عدالت عظمٰی کے حکم پر قائم کردہ کمیٹی نے انکشاف کیا ہے کہ ایک سال میں 15 ارب ڈالر ملک سے باہر منتقل کیے گئے ۔

ملک میں قومی خزانہ مزید خالی ہو جانے کے وجہ سے وہ خالی برتن کی طرح بجنے لگا ہے ، خالی خزانے کے باوجود ملک میں کرنسی نوٹ چھاپنے والی مشین بھی مسلسل چل رہی ہے جس کا سوئچ آف کرنے والا کوئی نہیں ہے ، اسٹیٹ بنک کی تازہ رپورٹ کے مطابق بیرونی قرضہ جی ڈی پی کا 82.3 فیصد ہو چکا ہے جس کی حد زیادہ سے زیادہ 60 فیصد ہونی چاہیے جو آج سے چار پانچ ماہ قبل 66 فیصد تک تھی، امریکی امداد بند ہونے کے بعد ماہ اپریل میں چینی بنکوں سے ایک ارب ڈالر قرض لیا گیا ، اب الیکشن سر پر ہیں اور ان پر ہونے والے اخرجات بھی آنے ہیں اور ایک سے زیادہ حلقوں میں کھڑے ہونے والے امیدواروں کے ضمنی الیکشن بھی ہوں گے۔

اب ان تمام حالات کے ساتھ مزید مشکلات بھی سامنے آرہی ہیں ، ایک تو الیکشن کے بعد بننے والی نئی حکومت کو خزانہ خالی ملے گا دوسرا خطرہ امریکہ کی طرف سے سخت پابندیوں کا بھی ہو سکتا ہے ، کیونکہ 24 جون سے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کا اجلاس پیرس میں شروع ہو چکا ہے جو 29 جون کو اختتام پذیر ہوگا ، فروری میں فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے اجلاس میں پاکستان کا نام تین ماہ کے لیے گرے لسٹ میں شامل کیا گیا تھا ، اس تین ماہ کے دورانیے میں پاکستان نے 25 اپریل کو 27 صفحات پر مشتمل ایک رپورٹ ارسال کی تھی جسے تین رکنی ٹیم نے مسترد کر دیا تھا ، اس کو مسترد کرنے کی وجہ انہوں نے کہا ہے پاکستان نے منی لانڈرنگ اور ٹیررازم فنانسنگ کے حوالے سے مطلوبہ اقدامات نہیں اٹھائے ہیں۔

اس تین مہینے کے وقت میں پاکستان میں ایک تو حکومت مدت پوری ہونے کے بعد اسمبلیاں تحلیل ہوگئی ہیں ، دوسرا بمبئی حملوں کے حوالے سے نواز شریف کا متنازعہ بیان ، اسد درانی کی کتاب کا معاملہ بھی اثر انداز ہو گا۔

اب 29 جون کو پتہ چلے گا آیا پاکستان کو مزیدے کچھ ماہ گرے لسٹ میں رکھا جاتا ہے یا نہیں یا کسی اور لسٹ میں نام ڈال دیا جاتا ہے کچھ کہنا قبل از وقت ہے بہرحال خزانہ بھی خالی ہے ڈالر مہنگا ہے اور مہنگائی زوروں پر ہے۔


اگر آپ بلاگر کے مضمون سے متفق نہیں ہیں تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اوراگرآپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پرشیئرکریں

Print Friendly, PDF & Email