The news is by your side.
Güvenilir bahis siteleri 2022
betsat
mecidiyeköy escort mecidiyeköy escort etiler escort etiler escort taksim escort beşiktaş escort şişli escort bakırköy escort ataköy escort şirinevler escort avcılar escort esenyurt escort bahçeşehir escort istanbul escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort
mariobet.biz
betwoon kayıt
deneme bonusu veren siteler
canlı casino
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
bailarinas de la hora pico Britney Shannon barely keeping whole thing in her throat Nicole Nix obtient saucissonner par un russe mec sur une table
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
gaziantep escort
gaziantep escort
modabet giriş
ankara escort escort ankara escort
Tipobet365
Canlı Kumar
istanbul evden eve nakliyat
Group of passionate teen angels lick every other Hottie babe Lou Charmelle fucking a black meat Milf Nina Elle gets fucked in dogystyle
istanbul masaj salonuistanbul masaj salonuhttp://www.escortperl.com/Gaziantep escortDenizli escortAdana escortHatay escortAydın escortizmir escortAnkara escortAntalya escortBursa escortistanbul escortKocaeli escortKonya escortMuğla escortMalatya escortKayseri escortMersin escortSamsun escortSinop escortTekirdağ escortEskişehir escortYalova escortRize escortAmasya escortBalıkesir escortÇanakkale escortBolu escortErzincan escort

آپ کے والدین اپنے وقت کے ولی ہیں

دور ِجدید میں نہ جانے کیوںہمارے بچوں کے احساسات بھی جدید ہوچکے ہیں ۔ مدر ڈے‘ فادر ڈے،تو بڑے شوق سے مناتے ہیں واٹس اپ ،پر بڑے بڑے میسجز اور وڈیوزتو اپ لوڈ ہوجاتی ہیں لیکن جب عملی محبت کی تصویر ایدھی،اور اولڈ ہاؤسز میں دیکھتا ہوں تو احساسات کو اپنے غم کے حصار میں کھڑا دیکھتا ہوں ۔ تکالیف اٹھا کر ماں اپنے بچے کو پالتی ہے اور پھر وہی ماں باپ غیروں کے ہاتھوں پلتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ گھروں میں بھی ان کے ساتھ اس  سے ملتا جلتا سلوک نظر آتا ہے ۔

بچے باہر ممالک میں چلے جاتے ہیں اور ماں باپ کو وہاں سے چیزیں بھیجتے رہتے ہیں اور جب ہمت ختم ہوجاتی ہے تو واپس آجاتے ہیں محبت لٹاتی ماں کو ان چیزوں کی ضرورت نہیں ہوتی ہے وہ تو منتظر ہوتی ہے کہ اس کا بیٹا جس کو اس نو ماہ اپنی کوکھ میں رکھا وہ واپس آجائے وہ اس کے لئے سب سے قیمتی ہوتا ہے اس امید پر وہ اس نومولود کو رضائے الہیٰ وعنایت کے طفیل پالتی ہے جو اس کو رحمت او رنعمت ملنے والی ہوتی ہے اگر رحمت آئی تو سرکار دوعالم ﷺ کا سلام آئیگا اور ماں اس کی پرورش دین الہٰی کے احکامات کے تحت کرنے کی کوشش کرتی ہے تاکہ جب اس بچی کے نصیب جاگے اور وہ رخصت ہوکر اپنے دوسرے گھر جائے گی تو یہ تربیت اور پرورش اس کے لیے گوشئہ عافیت بن کر اس کو سرخرو کریں گے اور اگر نعمت (بیٹا) ہو ا تو اس کی پرورش اس انداز میں کی جائے تو معاشرے میں اس کی عزت اور وقار کی باتیں اسکے سامنے آتی رہیں۔

ماں باپ کی محبتیں اولاد کے لیے کسی گوہرِ نایاب سے کم نہیں ہوتی ہیں اگر اولاد کو اس کا احساس ہو لیکن اس میں والدین کی تربیت کا بہت بڑا کردار ہونا چاہئیے والدین اپنے بچوں کو ایسا ماحول فراہم کریں کہ وہ والدین کے لیے وقتی سہارے سے آگے بڑھ کر مستقل مضبوط سہارے کے روپ میں سامنے آئیں ،والدین کے بارے میں تو اللہ تبارک تعالیٰ فرماتا ہے کہ (اگر ماں باپ) راضی تو میں راضی ہوں۔  اولاد کو ماں باپ کی تکالیف کا اندازہ اس وقت ہوتاہے جب وہ خود ماں باپ بن جاتے ہیں اس کے بعد قانون قدرت کی جانب سے مکافات عمل شروع ہوجاتا ہے ۔

جن اولادوں نے اپنے ماں باپ کو ہر ممکن سکون دینے کی کوشش کی ہوتی ہے وہ اپنا خوشحالی کا سفر خود اپنی آنکھوں سے دیکھتی ہیں لیکن جو اولادیں اپنے والدین کے لئے کسی بھی طرح تکالیف کا باعث بنتی ہیں وہ اس مکافات عمل کے تحت دین ودنیا میں اپنے لیے بے پناہ مصائب وتکالیف کو اپنا مقدر بنا لیتی ہیں اور پھر وہی اولاد مختلف پیر وفقیروں،عاملوں کے پاس رونا لے کر چلی جاتی ہے اور کثیر پیسے دیکر اپنے مسائل حل کرنے کے لیئے کہتی ہیں جبکہ بے وقوف اولاد یہ نہیں جانتی ہے کہ اس کے ماں باپ ہی وقت کے ولی گھر میں موجود ہیں ،ان ناخلف اولادوں کو اگر کوئی درست پیر عامل مل جائے تو وہ یہی کہے گا کہ پہلے اپنے ماں باپ کو راضی کر پھر میرے پاس آ کیوں جب اللہ کہہ رہا ہے کہ جس کے ماں باپ راضی ہوں گے میں ان سے راضی ہوں گا۔

ماں باپ وقت کے ولی ہوتے ہیں ان سے دعائیں لیں سارے کام بھی ہوجائیں  گے اور پیر ِکامل بھی مل جائے گا ،تاریخ وکائنات گواہ ہیں کہ باعث وجود کائنات سرکار دوعالم حضرت محمد مصطفی ﷺ کے پاس بیش بہا گوہر نایاب اصحابہ رضوان اللہ اجمعین وجانثاران کی موجود تھی لیکن ایک ایسے بھی تھے جو موجود نہ تھے پھر بھی (عاشق رسولﷺ) کہلائے تاریخ ِاسلام ان کو حضرت اویس قرنیؓ کے نام سے جانتی ہے ۔عاشق رسولﷺ کا خطاب حاصل کرنے والے حضرت اویس قرنی ؓ کو یہ شرف محسن انسانیت نبی کریم حضرت محمد مصطفی ﷺ کی روحانی محبت کے طفیل حاصل ہوا۔

اس کے ساتھ ان کی اپنی ماں کی محبت وخدمت کو بھی  مضمون میں  شامل کرنا  ضروری ہے۔ حضرت اویس قرنی ؓ نے اپنی والدہ حضور کی ایسی خدمت کی کہ دربار محمد ﷺ سے عاشق رسولﷺ کا درجہ پالیا کیونکہ اگر اویس قرنی ؓ اپنی ماں کی خدمت نہ کرتے تو ان سے کوئی بھی راضی نہ ہوتا،حضرت اویس قرنی ؓ کی ما ں سے محبت کی کیا بات کی جائے۔ آپ جب اپنی  دانتوں سے محروم ضعیف العمر  والدہ کو کھانا کھلاتے تھے  تو اویس قرنی ؓ نوالہ نرم کرنے کی لیے پہلے اس کو چبا تے پھر والدہ کو کھلاتے تاکہ ان کو کھانے میں کوئی تکلیف نہ ہو۔

خدمت ومحبت کا یہ عالم ہوگا تو کیا (قرنی ؓ) سرکار دوعالم ﷺکا پیارا نہ ہوگا (سبحان اللہ)حضرت اویس قرنی ؓ کا اپنے پیارے آقا ﷺ سے پہلی محبت اور اپنی والدہ سے دوسری محبت کے خوبصورت وحسین امتزاج کی روشنی ہمارے لیے باعث تقلید ہے ۔ ماں باپ کی تکالیف کا جو انہوں نے پیدائش کے وقت اٹھائے اس کا مدوا تاقیامت کسی قرض کی طرح ہماری زندگی کے اختتام تک رہے گا۔ خاص طور سے ماں کا درجہ بہت بلند ہے ، ماں باپ کے عالمی دن ضرور منائیے لیکن اس طرح منائیے کہ آپکا ضمیر آپ کو پریشان نہیں کرے ۔

اپنی آخرت کو سنوارنے کے لیے والدین کی خدمت کو اپنی اولین ترجیح بنالیجیے ۔اللہ تبارک تعالیٰ آپکی زندگی کو سکون کی دولت سے بھر دے گا  اورماں باپ  بھی اپنے بچوں کی تربیت کا خاص خیال رکھیں کیونکہ اگر ببول کا پودا لگائیں گے تو اس میں رس دار پھل نہیں لگے گا۔ طریقت وشریعت دونوں میں ماں باپ کی محبت وخدمت پر زور دیا گیا ہے ۔دیناوی اور خانقاہی نظام دونوں میں ماں باپ کو اگر نظر انداز کردیا جائے تو پھر یہ نظام آپکے لیے خود بخود ثانوی ہوجائیں گے اورآپ اپنے  پیر کے ساتھ جسمانی طور پر تو ہوں گے لیکن روحانی ٖ فیوض برکات سے آپ ہمیشہ محروم رہیں گے۔

دین وآخرت کی ظاہری وروحانی اور دنیاوی تمام نعمتیں حاصل کرنے کے لیے والدین کی خدمت کو اپنی زندگی پہلا مقصد بنانا ہوگا ،اللہ تبارک تعالیٰ ہم سب کو اپنے ماں باپ کی خدمت کرنے کی اور جن کے والدین اس دنیا میں نہیں ہیں ان کی اولادں کو قران پڑھ کر بخشنے اور ان کے نام سے صدقہ ٔ جاریہ کرنے  کی توفیق عطا فرمائے (آمین یا رب العالمین) ۔


اگر آپ بلاگر کے مضمون سے متفق نہیں ہیں تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اوراگرآپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پرشیئرکریں

Print Friendly, PDF & Email
شاید آپ یہ بھی پسند کریں