The news is by your side.
betsat

bettilt

anadolu yakası escort bostancı escort bostancı escort bayan kadıköy escort bayan kartal escort ataşehir escort bayan ümraniye escort bayan
kaçak bahis siteleri canlı casino siteleri
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
maslak escort
istanbul escort şişli escort antalya escort
en iyi filmler
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
aviator oyunu oyna lightning rulet siteleri slot siteleri

کسے روئیں، کسے نہ روئیں

چنددن قبل قومی احتساب بیورو نے پنجاب یورنیورسٹی کے سابق وائس چانسلر ڈاکڑ مجاہد کامران اور چند دیگر پروفیسروں کو غبن اور 550 بھرتیوں کے الزام پر گرفتار کیا ۔ معاملہ یہاں تک رہتا تو ٹھیک تھا کہ جس نے جرم کیا چاہے وہ کوئی بھی ہو اسے جوابدہ ہونا چاہیے لیکن جب انہی بوڑھے اساتذہ کو ہتھکڑیاں لگاکر کسی عادی خطرناک مجرم کی طرح عدالت میں پیش کیا گیا ، وہ منظر کسی صورت بھی ایک مجھ جیسے طالب علم کے لیے بھی قابل قبول نہ تھا کیونکہ اساتذہ کی عزت و تکریم بہر صورت پیش نظر رکھنا ضروری تھی۔

وہ بوڑھے اساتذہ جنہوں نے اپنی ساری زندگی تحصیل علم کے متلاشیوں کوزیور علم سے آراستہ کرتے گزاری۔ یہی نہیں بل کہ انہیں جرائم سے اجتناب اور اس کے بھیانک انجام سے آگاہ کیا اور پڑھایاکہ جرم وہ ناسور ہے جو نسلیں تباہ کر دیتا ہے۔اساتذہ کو نیب کے ایک افسر کا تضحیک آمیز اور بغض و عناد سے ہتھکڑیوں میں جکڑنا اس امر کی غمازی کرتا ہے کہ مذکورہ افسر علم روشنی سے منور نہ تھا اگر ہوتا تو اسے بخوبی آگاہی ہوتی جو بابا بلھے شاہ فرما گئے ہیں۔’’عِلم پڑھیا تے ادب نہ سکھیا کی لینا علمے وڑ کے ہُو‘‘۔سوچیے وہ کیا بھیانک اور وحشت ناک گھڑی ہو گی جب ان اساتذہ نے ہتھکڑی پہنی ہو گی اور کیا سوچا ہو گا کہ ہماری برسوں کی ریاضیت خاک پنہاں ہو گئی؟ اندر سے وہ کیسے ٹوٹ کر بکھرے ہو نگے اور کہتے ہوں گے کہ یہ سب پہننے سے پہلے انہیں موت کیوں نہ آگئی۔

الیکٹرانک میڈیا اور سوشل میڈیا پر اساتذہ کے ساتھ ناروا سلوک پر جب آواز اُٹھی تو ہر طبقہ فکر نے اس غیر روایئتی عمل کی مذمت کی اور نیب کے چیرمین سے نوٹس لینے کی اپیل کی جس پر انکوائری کے بعد ایک افسر کو معطل کر دیا گیا اور یوںیہ واقعہ قصّہ پَارینہ بن گیا۔ لیکن سوال یہ ہے کہ جن اساتذہ کی ہتک اور جگ ہنسائی ہوئی کیا وہ اس معاشرے میں بغض و عناد رکھنے والے زیور علم سے بے بہرہ افسران واپس دلا سکتے ہیں؟ جواب یقینا نہیں میں ہے۔ ایک طرف اس ملک میں جب کسی الزام میں قید سیاست دانوں اوربیوروکریٹس کو عدالت میں پیش کیا جاتا ہے تو بنا ہتھکڑیوں کے لیکن دوسری طرف بوڑھے اساتذہ کو ہتھکڑیاں لگا کر اورعذریہ پیش کیا گیا کہ ان کے بھاگنے کا ڈر تھا۔بند کر دیں یہ ڈرامے بازی اور دوہرا معیار۔

دُنیا کے سب سے بڑے عالم و استاد ہمارے پیارے نبی اکرم ﷺ ہیں جنکی تعلیمات رہتی دنیا تک کے لیے رُشد و ہدایت کا منبع ہیں اور اساتذہ کی عزت و وقار ہمارے ایمان کا حصہ ہے۔دُنیا کے ترقی یافتہ ممالک میں وزراءو سینٹرز کے بعد اگر کسی کو مقام فضیلت حاصل ہے تو وہ اساتذہ ہیں ۔ معروف دانشور اشفاق احمدنے بھی اپنا ایک واقعہ بیان کیا ہے کہ جب وہ فرانس میں اپنے ٹریفک چالان کو بھرنے گئے تو جب جج نے پیشہ پوچھا تو بتلایا گیا کہ وہ پڑھاتے ہیں تو جج اپنی کرسی سے کھڑا ہو گیا اور کہا کہ Teacher in the court?۔ اور فوراً چالان خارج کر دیا۔

اسی طرح ایک بار ملکہ برطانیہ اپنے اسکواڈ کے ساتھ ایک سڑک سے گزر رہی تھیں کہ ایک ٹریفک سگنل پر سارجنٹ نے ملکہ کا قافلہ روک دیا۔ جب اسکواڈ نے وجہ دریافت کی تو معلوم ہوا کہ دس بجے پروفیسر برکلے روڑ کراس کرکے سامنے شاپ پر کافی پینے جاتے ہیں اور میں نہیں چاہتا کہ وہ لیٹ ہو ں یا انہیں تکلیف ہو۔یہ بات جب ملکہ کو بتائی گئی تو ملکہ نے سارجنٹ کی بات سے اتفاق کرتے ہوئے پروفیسر کے گزرنے کا انتظار کیا۔

علم کھوجنے کے لیے کسی بھی شاگرد کا با ادب ہونا بہت ضروری ہے۔ ایک محاورہ ہے’باادب با مراد ، بے ادب بے مراد‘۔ اساتذہ کی عزت و احترام اگر دیکھنا ہے تو کسی بھی مدرسے چلے جائیں جہاں استادکی غیر حاضری میں مجال ہے کہ کوئی دوسرا اس استاد کی جگہ بھی بیٹھے۔ استاد کی کرسی خالی ہی رہے گی۔ ہمارے ہاں المیہ یہ ہے کہ استاد کو اپنے مضمون پر دسترس نہیں۔ کوئی شوق سے استاد بنتا نہیں بلکہ اکثریت حادثاتی ہے۔ہر ماں باپ کی خواہش ہوتی ہے کہ ان کی اولاد ڈاکٹر یا انجینئر بنے ۔جو طالب علم یا طالبہ رہ جائے تو وہ کچھ نہ کرنے کے طعنے سے بچنے کے لیے استاد بھرتی ہو جاتے ہیں۔جو صرف وقت گزاری کے لیے ٹیچر بنتے ہیں نہ کہ بچوں کو زیور علم سے آراستہ کرنے کے لیے۔وقت گزاری کی رہی سہی کسر سمارٹ موبائل اور سوشل میڈیا نے پوری کردی جس کی بدولت ہر ٹیچر کلاسوں میں طلباءکو پڑھانے کے بجائے موبائلوں پر مصروف رہتے ہیں اور اگر کوئی طالب علم سوال کرنے کی جسارت کرتا ہے تو اسے خاموش کر دیا جاتا ہے۔

آج کل تو صورتحال یہ ہے کہ اگر کسی طالب علم نے کلاس میں کوئی سوال پوچھ لیا تو ٹیچرکاکام بنتا ہے کہ وہ جواب دے یا اگر جواب فی الوقت نہیں آتاتو آئندہ کے لیے موخر کردےلیکن طالب علم سے بَیر رکھ لینا کہ اس نے سوال کرنے کی جراّت کیسے کی قطعاً قابل قبول رویہ نہیں۔

ٹیچنگ اور لرننگ بڑا پُراسرار کام ہے۔ اگر آپ استاد ہیں تو اپنے کسی طالب علم کو بیوقوف یا نالائق نہ سمجھیں۔ اگر استاد کی حُرمت کی خاطر میرا دل تڑپتا ہے تو استاد کو بھی چاہیے کہ وہ اپنی عزت و وقار کے بھرم کو قائم رکھے۔ بات وہی پرانی ہے کِسے روئیں کسے نہ روئیں۔آوے کا آواہ ہی بگڑا ہوا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email