The news is by your side.
Güvenilir bahis siteleri 2022
betsat
mecidiyeköy escort mecidiyeköy escort etiler escort etiler escort taksim escort beşiktaş escort şişli escort bakırköy escort ataköy escort şirinevler escort avcılar escort esenyurt escort bahçeşehir escort istanbul escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort
mariobet.biz
betwoon kayıt
deneme bonusu veren siteler
canlı casino
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
vip escort Bitlis escort Siirt escort Çorum escort Burdur escort Diyarbakir escort Edirne escort Düzce escort Erzurum escort Kırklareli escort
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
gaziantep escort
gaziantep escort
modabet giriş
ankara escort escort ankara escort
Tipobet365
Canlı Kumar
istanbul evden eve nakliyat
Group of passionate teen angels lick every other Hottie babe Lou Charmelle fucking a black meat Milf Nina Elle gets fucked in dogystyle

کبھی کبھی مجھے دیکھے شریر نظروں سے…ایمان قیصرانی کی شاعری

ایمان قیصرانی کی شاعری انسانی جذبات اور رویّوں کی عکاس ہے۔ ان کے اشعار میں نسائی شعور کی جھلکیاں اور عورت کے جذبات کا توانا اظہار دیکھا جاسکتا ہے۔

درد مندی، سوز و گداز اور احساس کی شدّت ایمان قیصرانی کی شاعری میں نمایاں ہے، اور اس وصف کے ساتھ وہ اپنے خیالات کو سادہ اور نہایت دل نشیں‌ انداز میں پیش کرتی ہیں۔ شاعرہ پاکستان کے ضلع ڈیرہ غازی خان کے مشہور قبیلے تمن قیصرانی بلوچ سے تعلق رکھتی ہیں۔ ان کے والد بشیر احمد عاجز قیصرانی نعت گو شاعر تھے۔ یوں ایمان قیصرانی کو بھی علم و ادب سے لگاؤ پیدا ہوا اور بعد میں وہ شاعری کرنے لگیں۔

پاکستان کی اس نوجوان شاعرہ نے بہاؤالدّین زکریا یونیورسٹی، ملتان سے تعلیم مکمل کی اور درس و تدریس سے وابستہ ہیں۔ ان کے دو مجموعۂ کلام منظرِ عام پر آچکے ہیں۔

ایمان قیصرانی کی ایک خوب صورت غزل باذوق قارئین کی نذر ہے، ملاحظہ کیجیے۔

زمامِ وقت کی گردش کو ٹالتا جائے
وہ اک نظر مری کھڑکی پہ ڈالتا جائے

مرے وجود میں اُترے ہر ایک نشتر کو
اب آگیا ہے تو آکر نکالتا جائے
بس اک نظر یونہی سگریٹ کو ہاتھ میں تھامے
مری کتاب کے صفحے کھنگالتا جائے
کبھی کبھی مجھے دیکھے شریر نظروں سے
کبھی کبھی تو مرا دم نکالتا جائے
کسی کسی کو یہ لہجہ نصیب ہوتا ہے
کہ لفظ لفظ نگینوں میں ڈھالتا جائے
بس اک چراغ کی حسرت کہ جو تجلّی سے
مرے نصیب کی ظلمت اُجالتا جائے
یہ لوگ اس پہ ہی ایمان وار کرتے ہیں
جو ٹھوکروں پہ بھی خود کو سنبھالتا جائے

Print Friendly, PDF & Email
شاید آپ یہ بھی پسند کریں