The news is by your side.
Güvenilir bahis siteleri 2022
betsat
mecidiyeköy escort mecidiyeköy escort etiler escort etiler escort taksim escort beşiktaş escort şişli escort bakırköy escort ataköy escort şirinevler escort avcılar escort esenyurt escort bahçeşehir escort istanbul escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort
mariobet.biz
betwoon kayıt
deneme bonusu veren siteler
canlı casino
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
bailarinas de la hora pico Britney Shannon barely keeping whole thing in her throat Nicole Nix obtient saucissonner par un russe mec sur une table
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
gaziantep escort
gaziantep escort
modabet giriş
ankara escort escort ankara escort
Tipobet365
Canlı Kumar
istanbul evden eve nakliyat
Group of passionate teen angels lick every other Hottie babe Lou Charmelle fucking a black meat Milf Nina Elle gets fucked in dogystyle
istanbul masaj salonuistanbul masaj salonuhttp://www.escortperl.com/Gaziantep escortDenizli escortAdana escortHatay escortAydın escortizmir escortAnkara escortAntalya escortBursa escortistanbul escortKocaeli escortKonya escortMuğla escortMalatya escortKayseri escortMersin escortSamsun escortSinop escortTekirdağ escortEskişehir escortYalova escortRize escortAmasya escortBalıkesir escortÇanakkale escortBolu escortErzincan escort

بدلاؤ آسکا نہ مرے دیو داس میں…. رومانوی شاعری

فوزیہ شیخ نے نظمیں‌ بھی کہی‌ ہیں، لیکن غزل ان کی محبوب صنفِ سخن ہے‌۔ شہرِ سخن کی اس خوش فکر شاعرہ کا تعلق خوشاب سے ہے۔ ایم اے تک تعلیم حاصل کی ہے۔ ان دنوں پنجاب کے شہر فیصل آباد میں مقیم ہیں جہاں مختلف ادبی تنظیموں کے تحت منعقدہ مشاعروں میں شریک ہوتی ہیں اور سامعین سے اپنے کلام پر داد پاتی ہیں۔

اس شاعرہ کی ایک غزل باذوق قارئین کی نذر ہے۔

غزل
آواز کس نے دی مجھے شدّت کی پیاس میں
دریا انڈیل لائی ہوں سارا گلاس میں

میں جانتی ہوں آئے گا اک روز لوٹ کر
اپنی گھٹن سے تنگ یا جینے کی آس میں

اس کو بتا نہیں سکی دل کی اداسیاں
تصویر ایک بھیج دی کالے لباس میں

شادی تو ایک جسم پہ قبضے کی ہے سند
جب تک محبتیں نہ ہوں اس کی اساس میں

کرتے نہیں ہیں شکر کہ آنگن میں پھول ہیں
ہم رزق ڈھونڈتے رہے گندم کپاس میں

ہر پل جوان رہتی ہیں اس کی محبتیں
لگتا ہے تیس کا مجھے ہو کر پچاس میں

برسوں کے بعد بھی ملا، ویسا ہی سر پھرا
بدلاؤ آسکا نہ مرے دیو داس میں

Print Friendly, PDF & Email
شاید آپ یہ بھی پسند کریں