The news is by your side.
betsat

bettilt

anadolu yakası escort bostancı escort bostancı escort bayan kadıköy escort bayan kartal escort ataşehir escort bayan ümraniye escort bayan
kaçak bahis siteleri canlı casino siteleri
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
maslak escort
istanbul escort şişli escort antalya escort
en iyi filmler
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
aviator oyunu oyna lightning rulet siteleri slot siteleri

بے بسی (فوزیہ شیخ کی شاعری)

“بے بسی”

سرمئی شام کی وحشتوں کو لیے
کوئی گھر سے چلا
صبحِ ضوریز کی چشمِ نمناک سے اٹھ رہا تھا دھواں
ایک قصّہ سناتا ہوا
رنج اٹھاتا ہوا قافلہ
تیری منزل الگ، میرا رستہ الگ
گرد اوڑھے ہوئے
کوئی چلتا رہا۔۔۔

صبح اور شام کا کیسے ہوتا ملن
پیڑ چھاؤں سے خود ہی الجھنے لگے
اور پنچھی سبھی گھونسلے چھوڑ کر
دائمی ہجرتوں کے حوالے ہوئے
ہجر آنکھوں میں جب ہو سمایا ہوا
نیند کو راستہ کب میسّر ہوا؟

خواب بھی در بدر اب بھٹکنے لگے
آہ بھرنے لگے
رات ڈھلنے لگی، چاند جلنے لگا
چپ فلک پر کوئی دیکھتا رہ گیا
کوئی کاندھا تلک نہ میسّر ہوا
بے بسی سے مری سانس رکنے لگی
کوئی بچھڑا ہوا یاد آنے لگا

شاعرہ: فوزیہ شیخ

Print Friendly, PDF & Email