The news is by your side.
Güvenilir bahis siteleri 2022
betsat
mecidiyeköy escort mecidiyeköy escort etiler escort etiler escort taksim escort beşiktaş escort şişli escort bakırköy escort ataköy escort şirinevler escort avcılar escort esenyurt escort bahçeşehir escort istanbul escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort
mariobet.biz
betwoon kayıt
deneme bonusu veren siteler
canlı casino
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
vip escort Bitlis escort Siirt escort Çorum escort Burdur escort Diyarbakir escort Edirne escort Düzce escort Erzurum escort Kırklareli escort
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
gaziantep escort
gaziantep escort
modabet giriş
ankara escort escort ankara escort
Tipobet365
Canlı Kumar
istanbul evden eve nakliyat
Group of passionate teen angels lick every other Hottie babe Lou Charmelle fucking a black meat Milf Nina Elle gets fucked in dogystyle

جو اس کے چھونے میں ہے شفا وہ کسی دوا میں اثر نہیں ہے …(رومانوی شاعری)

اردو میں رومانوی شاعری تخیّل کے حُسن اور اپنے اظہار کی بے تکلّفی کی صورت میں نہایت دل گداز اور لطیف معلوم ہوتی ہے۔ بالخصوص شاعرات نے اپنے کلام میں محبوب سے متعلق جذبات اور احساسات کو نہایت خوب صورتی سے پیش کیا ہے۔ فوزیہ شیخ کی یہ غزل ان کیفیات کے اظہار کا ایک نمونہ ہے جو خانۂ دل میں‌ برپا ہیں۔ اس غزل کے اشعار شدّتِ احساس کے ساتھ تخیل کی لطافت اور نزاکت سے آراستہ ہیں جن میں رشتے یا تعلق کو نبھانے کی باتیں، شکایت، قربت اور گریز، خوشی اور غم کی کیفیات، خواہش، آرزو کا اظہار اور محبوب کے ساتھ ایک حسین اور نئے جہان کی تعمیر کا خواب بُنا گیا ہے۔

فوزیہ شیخ کی غزل ملاحظہ ہو۔

کئی دنوں سے گریز پا ہے یا رابطے میں اگر نہیں ہے
اداس وہ بھی ضرور ہوگا مجھے بھی اپنی خبر نہیں ہے

میں خالی دامن بھی ساتھ اس کے امیر خود کو سمجھ رہی تھی
مری ضرورت نہیں ہے دنیا، مری طلب مال و زر نہیں ہے

اسے بلاؤ کہ پاس بیٹھے ذرا سا ماتھے پہ ہاتھ رکھ کر
جو اس کے چھونے میں ہے شفا وہ کسی دوا میں اثر نہیں ہے

کسی کے جانے سے میری دنیا کی سب بہاریں اجڑ گئی ہیں
کہاں کہاں پر نہیں ہیں کانٹے، کہاں پہ رستہ بھنور نہیں ہے

ہماری آنکھوں کے پھیلے اشکوں میں ٹوٹے خوابوں کی داستانیں
ہماری قسمت سفر ہے جس میں کوئی بھی منزل یا گھر نہیں ہے

ہمارا ایمان ہے محبّت، شدید مشرک ہیں اس کی آنکھیں
نجانے کس بُت پہ مَر رہی ہیں، ہمارے رخ پہ نظر نہیں ہے

Print Friendly, PDF & Email
شاید آپ یہ بھی پسند کریں