The news is by your side.
Güvenilir bahis siteleri 2022
betsat
mecidiyeköy escort mecidiyeköy escort etiler escort etiler escort taksim escort beşiktaş escort şişli escort bakırköy escort ataköy escort şirinevler escort avcılar escort esenyurt escort bahçeşehir escort istanbul escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort
mariobet.biz
betwoon kayıt
deneme bonusu veren siteler
canlı casino
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
vip escort Bitlis escort Siirt escort Çorum escort Burdur escort Diyarbakir escort Edirne escort Düzce escort Erzurum escort Kırklareli escort
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
gaziantep escort
gaziantep escort
modabet giriş
ankara escort escort ankara escort
Tipobet365
Canlı Kumar
istanbul evden eve nakliyat
Group of passionate teen angels lick every other Hottie babe Lou Charmelle fucking a black meat Milf Nina Elle gets fucked in dogystyle

آجائے نہ یہ خط کسی مخبر کے ہاتھ میں ….

اردو زبان اور شاعری سے لگاؤ رکھنے والی فوزیہ شیخ نے جب خود کو موزوں طبع پایا اور اپنے تخلیقی سفر کا آغاز کیا تو غزل جیسی مقبول صنفِ سخن ان کی توجہ کا مرکز بنی اور اسے اپنے خیالات کے اظہار کا وسیلہ بنایا۔ شاعرہ نے نظمیں‌ بھی کہی ہیں، لیکن ان غزل ان کی محبوب صنفِ سخن ہے۔ فوزیہ شیخ کی ایک تخلیق باذوق قارئین کی نذر ہے-

غزل
دیتی نہیں ہوں اس لیے کمتر کے ہاتھ میں
آجائے نہ یہ خط کسی مخبر کے ہاتھ میں

کیا کھول کر کروں گی میں کشتی کے بادباں
موجِ ہوا کا رخ ہے سمندر کے ہاتھ میں

پوشاکِ زندگی تجھے سیتے سنوارتے
سو چھید ہو گئے ہیں رفو گر کے ہاتھ میں

کہتے ہو پھر کہ بیٹی کی قسمت خراب ہے
ہیرا تو خود تھما دیا پتّھر کے ہاتھ میں

ہوتی ہے دال بھی من و سلویٰ سے بہترین
محنت کے آبلے ہوں جو شوہر کے ہاتھ میں

کانٹوں کے خوف سے رہی خوشبو سے بے نیاز
حالانکہ پھول تھے یہاں اکثر کے ہاتھ میں

تالے پہ آپ اندھا بھروسہ نہ کیجیے
ہوتی ہیں گھر کی عزتیں بھی در کے ہاتھ میں

Print Friendly, PDF & Email
شاید آپ یہ بھی پسند کریں