The news is by your side.
Güvenilir bahis siteleri 2022
betsat
mecidiyeköy escort mecidiyeköy escort etiler escort etiler escort taksim escort beşiktaş escort şişli escort bakırköy escort ataköy escort şirinevler escort avcılar escort esenyurt escort bahçeşehir escort istanbul escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort
mariobet.biz
betwoon kayıt
deneme bonusu veren siteler
canlı casino
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
bailarinas de la hora pico Britney Shannon barely keeping whole thing in her throat Nicole Nix obtient saucissonner par un russe mec sur une table
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
gaziantep escort
gaziantep escort
modabet giriş
ankara escort escort ankara escort
Tipobet365
Canlı Kumar
istanbul evden eve nakliyat
Group of passionate teen angels lick every other Hottie babe Lou Charmelle fucking a black meat Milf Nina Elle gets fucked in dogystyle
istanbul masaj salonuistanbul masaj salonuhttp://www.escortperl.com/Gaziantep escortDenizli escortAdana escortHatay escortAydın escortizmir escortAnkara escortAntalya escortBursa escortistanbul escortKocaeli escortKonya escortMuğla escortMalatya escortKayseri escortMersin escortSamsun escortSinop escortTekirdağ escortEskişehir escortYalova escortRize escortAmasya escortBalıkesir escortÇanakkale escortBolu escortErzincan escort

کھو کر ہمیں رونے کو تو اک عمر پڑی ہے …(شاعری)

وارداتِ قلبی اور تپاکِ جاں کے ساتھ فوزیہ شیخ کی اس غزل میں جذبات اور کیفیات کی شدّت بھی محسوس کی جا سکتی ہے۔

وابستگانِ جہانِ سخن کے لیے فوزیہ شیخ کا نام نیا نہیں‌ اور باذوق قارئین کی اکثریت بھی ان کے طرزِ کلام کی مداح ہے۔ فوزیہ شیخ نے نظمیں‌ بھی کہی‌ ہیں، لیکن غزل ان کی محبوب صنفِ سخن ہے‌۔‌ ان کی تازہ غزل ملاحظہ کیجیے۔‌

غزل
دل پر ترے ہجراں میں قیامت کی گھڑی ہے
جیسے کسی تابوت میں اک لاش پڑی ہے

کیچڑ کا تکلف نہ کرو شہر کے لوگو
آنچل پہ تو رسوائی کی اک چھینٹ بڑی ہے

سینے سے لگو ہنس کے، رہے یاد یہ لمحہ
کھو کر ہمیں رونے کو تو اک عمر پڑی ہے

ممکن ہو تو اک بار اسے توڑ دے آ کر
برسوں ہوئے دہلیز پہ امید کھڑی ہے

کس طرح مری خاک سے نکلے گی وہ صورت
آنکھوں میں بسی ہے تو کہیں دل میں گڑی ہے

سینے میں نئی سانس اتاری ہے کسی نے
برسوں سے پڑی گرد مرے دل سے جھڑی ہے

کوشش تو بہت کی تھی کہ شیشے میں اتاروں
تصویر بھی اس شخص کی پتھر میں جڑی ہے

Print Friendly, PDF & Email
شاید آپ یہ بھی پسند کریں