The news is by your side.
Güvenilir bahis siteleri 2022
betsat
mecidiyeköy escort mecidiyeköy escort etiler escort etiler escort taksim escort beşiktaş escort şişli escort bakırköy escort ataköy escort şirinevler escort avcılar escort esenyurt escort bahçeşehir escort istanbul escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort
mariobet.biz
betwoon kayıt
deneme bonusu veren siteler
canlı casino
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
bailarinas de la hora pico Britney Shannon barely keeping whole thing in her throat Nicole Nix obtient saucissonner par un russe mec sur une table
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
gaziantep escort
gaziantep escort
modabet giriş
ankara escort escort ankara escort
Tipobet365
Canlı Kumar
istanbul evden eve nakliyat
Group of passionate teen angels lick every other Hottie babe Lou Charmelle fucking a black meat Milf Nina Elle gets fucked in dogystyle
istanbul masaj salonuistanbul masaj salonuhttp://www.escortperl.com/Gaziantep escortDenizli escortAdana escortHatay escortAydın escortizmir escortAnkara escortAntalya escortBursa escortistanbul escortKocaeli escortKonya escortMuğla escortMalatya escortKayseri escortMersin escortSamsun escortSinop escortTekirdağ escortEskişehir escortYalova escortRize escortAmasya escortBalıkesir escortÇanakkale escortBolu escortErzincan escort

یہ قوم ہارے گی نہیں۔۔۔ مگر

یہ قوم ہرگز بھی دشمن کی کمینگی کے آگے نہ ہی جھکے گی نہ ہی ہارمانے گی شہید کیپٹن اسفند یاربخاری نے تن تنہا کھڑے رہ کریہ ثابت کردیا کہ اگردنیا پاکستانی قوم پہ حیراں ہے تو اس کی حیرانگی بجا ہے۔ واشنگٹن پوسٹ کہتا ہے کہ پاکستان نے 70 فیصد دہشت گردی پہ قابو پالیا ہے۔ ہمارا دشمن غیرمحفوظ ہونے کا واویلا مچائے جا رہا تھا لیکن عجیب ہے یہ قوم جو اپنی ہی دھن میں مگن ہے۔ سننے میں آیا کہ اسفند یاربخاری کو آپریشن کے ابتداء میں ہی گولی لگ گئی تھی۔ لیکن پاکستان بالعموم اوراٹک کے خطے کو بالخصوص اس سپوت پہ نازہونا چاہیے جوگولی لگنے کے باوجود اپنے محاذ سے پیچھے نہیں ہٹا۔ ہم لکھاری حضرات غیر مصدقہ اطلاعات پر ہی تحریر کرتے ہیں۔ کیوں کہ تصدیق کا کوئی نظام نہ تو لکھاریوں کے پاس ہے نہ ہی کسی ایسے نظام تک رسائی ہے۔ اسفند یار آپریشن کی ابتدائی قیادت کا فریضہ سر انجام دے رہے تھے۔ زخمی ہوئے ۔ پیچھے نہیں ہٹے۔ اور کمک پہنچنے پہ دہشت گردوں کو واصل جہنم کر دیا گیا۔ تب تک اٹک کی دھرتی کا یہ سپوت جام شہادت نوش کرچکا تھا۔

ایک بہت عزیز دوست محترم شہزاد چوہدری صاحب نے بجا فرمایا کہ اٹک کی دھرتی کرنل (ر) شجاع خانزادہ، ڈی ایس پی شوکت شاہ اوردیگر شہدا اوراب اسفند یاربخاری کی شہادت پہ بلا شبہ فخرکرسکتی ہے۔ ایک محترم عزیز سے دوران گفتگو بحث چل نکلی کہ کیا نرالی قوم ہیں ہم کہ اپنے ہی وطن کوکرپشن کی جڑوں سے کھوکھلا بھی کرتے رہتے ہیں اوروقت پڑنے پہ اسی دھرتی کی خاطرمرمٹنے کو بھی تیارہوجاتے ہیں۔ انہوں نے چوک میں کھڑے چند پولیس والوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا کہ ، انہیں دیکھ رہے ہو۔ یہ قوم کے محافظ اس وقت خوش گپیوں میں فرائض سے غفلت برت رہے ہیں۔ بے شک درست! لیکن اگرابھی یہاں پہ وطن دشمن عناصر سے ان کا سامنا ہو جائے تو یہ جان دے دیں گے لیکن پیچھے نہیں ہٹیں گے۔ واقعی پاکستانی قوم کی نفسیات اقوام عالم بھی آج تک نہیں سمجھ پائی ہیں۔ شاید اس قوم کا کسی کی سمجھ میں نہ آنا ہی اس کی بقاء کی ضمانت بنا ہوا ہے۔

اغیارجب دیکھتے ہیں کہ اس قوم کی تورگوں تک میں کرپشن سرایت کر رہی ہے ایک دوسرے کی ذات کے بخیے ادھیڑنے میں مصروف ہیں تو وہ وارکرتے ہیں لیکن میں خود حیران رہ جاتا ہوں کہ دشمن کے سامنے(جنوری2014) شہید اعتزاز احسن جیسا عام سا طالبعلم آہنی دیواربن جاتا ہے۔ دشمن حیران رہ جاتا ہے کہ کیسے ایک نہتے بچے نے اپنے ساتھیوں کے لیے قربانی دے دی۔ وہ تو کچھ اور ہی سوچ کہ اپنی کمینگی دکھانے آیا تھا لیکن اس کا سامنا کیسے اس مضبوط چٹان سے ہوگیا۔

مارچ 2009 میں سری لنکن ٹیم پرہونے والے حملے کو یاد کریں دشمن نے سوچا ٹیم کہ یرغمال بنائیں گے اور مرضی کی شرائط ریاست سے منوائیں گے لیکن اس کے منصوبوں پہ اس وقت پانی پڑ گیا جب اس کا سامنا خلیل جیسے پاکستانی سے ہوا۔ کیا آپ تصور بھی کرسکتے ہیں کہ بس پہ گولیوں کی بوچھاڑ ہو رہی ہو اور انسان اس قدر حاضر دماغی دکھائے کہ وہ بس کو سٹیڈیم کے اندر محفوظ جگہ پر لے جائے؟ کیا ایسا ممکن ہے کہ موت سامنے ہو اور کوئی اس درجہ ہمت دکھا ئے؟ آج کی نسل نے 65 کی جنگ نہیں دیکھی لیکن ایسے واقعات دیکھ کر وہ باتیں سچی معلوم ہوتی ہیں کہ سفید لباس کی فوج نے ہماری مدد کی تھی۔

سابق صدر و آرمی چیف پہ حملہ ہوا تو صرف ایک ڈرائیور کی ہمت کی بدولت نہ صرف ان کی جان بچی بلکہ وہ محفوظ مقام تک بھی پہنچے۔ وہ بھی اس حالت میں کہ گاڑی صرف لوہے کے رمزپرچل رہی تھی۔ پاکستان کے پاس موجود پی تھری سی اورین P3C-Orion جہاز جو سمندری حدود کی حفاظت کے ضامن تھے۔ مئی 2011میں دشمن کی جارحیت کا نشانہ بن گئے۔ لیکن ان کو جزوی نقصان پہنچا۔ کیوں کہ وہاں بھی دشمن کی راہ میں لیفٹیننٹ یاسرعباس شہید حائل ہو گیا۔ دشمن وار کرتے ہوئے پریقین تھا کہ حفاظتی حصار بحفاظت پارکرکے پاکستان کی سمندری حدود کو داؤ پہ لگا دے گا لیکن حیران کن طور پر ایک چھوٹے رینک کے افسر نے ایک گھنٹہ انہیں روکے رکھا۔اس جزوی نقصان کا تخمینہ دیارغیرسے لگوایا گیا تو کم از کم ڈیڑھ کروڑ ڈالربنا لیکن ملکی انجینئرز نے آدھی لاگت میں کارنامہ سرانجام دے دیا۔ دشمن اب تک حیران ہے کہ آخراس قوم کے سپوتوں میں ایسا کون سا جذبہ ہے جو انہیں موت کے سامنے کھڑا کردیتا ہے۔

تخلیقی و تکنیکی لحاظ سے دنیا ہمیں کمتر سمجھتی ہے۔ اسرائیلی فورسز نے اوائل 2000 میں کارنر آئی کے نام سے ایک ہتھیار بنایا۔ جو دنیا میں اپنی نوعیت کا پہلا ہتھیار تھا جس کی خاصیت یہ تھی کہ بناء سامنے آئے مخصوص زاویے سے فائر کر سکتا ہے۔ 2012ء میں پاکستان آرڈیننس فیکٹری ’واہ‘ جانے کا اتفاق ہوا اور یہ دیکھ کر خوشگوار حیرت ہوئی کہ پاکستان 2008 سے POF-Eye نامی ہتھیار مکمل ملکی سطح پہ بنا رہا ہے جو کارنر آئی سے کئی گنا زیادہ بہتر ہے۔ پاکستان نے امریکہ سے ڈرون ٹیکنالوجی دینے کا مطالبہ کیا لیکن نہ مانا گیا۔ یہ مطالبہ نہ ماننا پاکستان کے لیے مفید ثابت ہوا۔ براق پاکستان کا پہلا ہتھیار بردار ڈرون بن کر ابھرا۔ جب پہلے ہی آپریشن میں سو فیصد نتائج سامنے آئے تو مغربی دنیا انگشت بدنداں کے مصداق حیران رہ گئی۔ ٹینک ٹیکنالوجی میں جب دنیا نے مدد نہ کی تو الضرار جیسی تخلیق سامنے آئی۔ امریکہ نے F-16 دینے میں حیل و حجت سے کام لیا تو JF-17تھنڈر جیسا شاہکار ابھرا۔ اس سب کے باوجود کیا وجوہات ہیں کہ یہ قوم تباہی کا شکار ہے؟
یہ صرف ایک شعبہ دفاع کے حقائق ہیں۔ ہر شعبہ اٹھا کر دیکھ لیں۔ یہ قوم آپ کو حیران کرتی نظر آئے گی۔ تو کیا وجہ ہے کہ دشمن پھر بھی وار کر جاتا ہے۔ اس کا آسان سا جواب ہے ۔ خلوص نیت ، ایمانداری، پیشہ وارانہ دیانت۔

جی ایچ کیو حملے کے دہشت گرد فوجی وردیوں میں ملبوس، نیول حملے کے مجرمان وردیوں میں ملبوس، آرمی سکول حملے کے مجرمان وردیوں میں ملبوس،اب پشاور ائیر بیس کے حملہ آور ایف سی کی وردیوں میں ملبوس۔ پاکستان میں ایک کلچرپایا جاتا ہے کہ اچھی گاڑی اور اچھا لباس کسی بھی ناکے سے گزر جانے کی ضمانت بنا ہوا ہے۔ اور وردی ہو تو سونے پہ سہاگہ۔ لاہور میں کچھ عرصہ پہلے ایک جج صاحب کو روکا گیا تو انہوں نے روکنے والے کے وہ لتے لیے کہ الاماں۔ یہ گناہگار آنکھیں گواہ ہیں کہ جن ناکوں پہ بوسیدہ و پرانی گاڑیاں روک کر جامع تلاشی لی جاتی ہے۔ وہیں سے نئی نکور گاڑیاں فراٹے بھرتی گزر جاتی ہیں۔ منطق یہ کہ اطلاع پہ روکتے ہیں۔ دہشت گرد تو ہماری ہی کمزوریوں کو استعمال کرتے ہیں۔ جس گاڑی میں دہشت گرد ایف سی کی وردی میں آئے ہوں گے اسے شہر میں گھومتے ہوئے شاید سیلیوٹ بھی کیے گئے ہوں۔ اور شاید ٹریفک میں پھنس جانے پر راستہ بھی بنا کر دیا گیا ہو۔ وجہ کہ انہوں نے وردی پہن رکھی تھی۔

یہ بات اپنی جگہ درست کہ کوئی اس قوم کو ہرا نہیں پائے گا۔ ہر سو یاسر و اعتزاز کھڑے ہیں۔ اسفند کی طرح کے سینے اس دھرتی کی حفاظت کر رہے ہیں۔ مگر۔۔۔ حالات اسی نہج پہ تو نہیں چل سکتے۔یہ راگ الاپنا چھوڑ دیں کہ سب افغانستان سے ہو رہا ہے۔ہو رہا ہے تو تدارک کریں۔ پچھلے پندرہ سال سے ہمارا ملک شورش کا شکار ہے اور ہم دہشت گردی سے جان نہیں چھڑا پا رہے تو پھر افغانستان جیسے ملک سے کیوں امید کر رہے ہیں کہ وہ قابو پائے گا جو نصف صدی سے زائد عرصے سے خانہ جنگی کا شکار ہے۔ جس کی فوج بھی چند سال پرانی ہے۔ اور جہاں ہمارے دشمن ممالک سر جوڑے بھی بیٹھے ہیں۔امید رکھنے کے بجائے خود عمل کریں۔ دنیا کی بہترین عملی فوج ہے ہمارے پاس۔ جن علاقوں میں افغانستان کا کنٹرول بھی نہیں ہے وہاں باہمی اعتماد سے سرجیکل اسٹرائیک کریں۔ یا پھر یہ منطق صرف مغربی ممالک کے لیے ہے؟ درست کہ بارڈر کو مکمل محفوظ بنانا ممکن نہیں لیکن متبادل نظام کریں۔ انسانی مربوط انٹیلیجنس نظام(Human Intelligence) کو اُن علاقوں میں مضبوط بنائیں جہاں نظر رکھنا مشکل ہے۔ براہ راست پورے بارڈر کو محفوظ نہیں کر سکتے تو کم از کم اس علاقے کے لوگوں کو شامل کر کے ایسا مکمل نظام بنائیں جو پل پل کی خبر دے۔پورے ملک میں فورسز کی وردی بیچنے والے عناصر کا قلع قمع کریں۔یہ کچھ مشکل بھی نہیں اگر کرنا چاہیں تو۔اس کے علاوہ ہر چوراہے پہ قائم ناکوں پہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ کوئی عام لباس میں ہے یا وردی میں شناخت لازمی دیکھیں۔مہنگی گاڑیوں اور کالے شیشوں کو سیلیوٹ کر کے چھوڑ دینے کے بجائے ان کی تلاشی لینے کو ضروری قرار دیں۔ جب چوراہے پہ ایک عام شہری کے ساتھ کسی اعلیٰ عہدے دار کی گاڑی بھی تصدیق کے بناء نہیں گزرے گی تو کچھ نہ کچھ بہتری ضرور آئے گی۔ مزید اگر دشمن نہیں طریقے ڈھونڈے گا تو ہم بھی مزید بہتری لائیں گے۔ اوپر سے کوئی فون کر کے روکنے والے کے بارے میں گلہ کرے یا غصہ تو اسے کھڑاک سے جواب دیں۔ ہم بہت با ہمت قوم ہیں۔ سب کرسکتے ہیں۔ ہمیں کوئی ہرا نہیں سکتا۔۔۔ مگر۔۔۔ اس وقت جب ہم کرنا چاہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
شاید آپ یہ بھی پسند کریں