The news is by your side.
Güvenilir bahis siteleri 2022
betsat
mecidiyeköy escort mecidiyeköy escort etiler escort etiler escort taksim escort beşiktaş escort şişli escort bakırköy escort ataköy escort şirinevler escort avcılar escort esenyurt escort bahçeşehir escort istanbul escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort
mariobet.biz
betwoon kayıt
deneme bonusu veren siteler
canlı casino
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
bailarinas de la hora pico Britney Shannon barely keeping whole thing in her throat Nicole Nix obtient saucissonner par un russe mec sur une table
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
gaziantep escort
gaziantep escort
modabet giriş
ankara escort escort ankara escort
Tipobet365
Canlı Kumar
istanbul evden eve nakliyat
Group of passionate teen angels lick every other Hottie babe Lou Charmelle fucking a black meat Milf Nina Elle gets fucked in dogystyle
istanbul masaj salonuistanbul masaj salonuhttp://www.escortperl.com/Gaziantep escortDenizli escortAdana escortHatay escortAydın escortizmir escortAnkara escortAntalya escortBursa escortistanbul escortKocaeli escortKonya escortMuğla escortMalatya escortKayseri escortMersin escortSamsun escortSinop escortTekirdağ escortEskişehir escortYalova escortRize escortAmasya escortBalıkesir escortÇanakkale escortBolu escortErzincan escort

عشق میں قیس کو استاد نہیں رکھوں گا…(غزلیں)

محمد علی عمران کو جہانِ سخن میں علی شیران کے نام سے پہچان ملی۔ اس نوجوان شاعر کا تعلق پاکستان کے ضلع جھنگ کی تحصیل شور کوٹ سے ہے۔ زمانۂ طالبِ علمی میں اپنے تخلیقی سفر کا آغاز کرنے والے علی شیران نے نظمیں‌ بھی کہی‌ ہیں، لیکن ان کی وجہِ شہرت غزل ہے۔ انھوں نے پنجاب یونیورسٹی سے گریجویشن اور سرگودھا یونیورسٹی سے انگریزی میں ایم۔ اے کیا اور تدریس سے وابستہ ہیں۔ ان کی چند غزلیں باذوق قارئین کی نذر ہیں۔

غزل

مرے سپرد کیا ہے نہ خود لیا ہے مجھے

کسی نے حیرتِ امکاں میں رکھ دیا ہے مجھے

بچا نہیں میں ذرا بھی بدن کے برتن میں

ترے خیال نے بے ساختہ پیا ہے مجھے

تو ایک شخص ہے لیکن تری محبّت میں

دل و دماغ نے تقسیم کر دیا ہے مجھے

جدائی، رنج، اداسی، اندھیرا، خوف، گھٹن

ہر ایک یار نے دل کھول کر جیا ہے مجھے

تمہارے بعد نہیں اب کسی کی گنجائش

کہ تم نے اتنا محبت سے بھر دیا ہے مجھے

غزل

مجھے شعور بھی خواہش کا داغ لگنے لگا

جہاں بھی دل کو لگایا، دماغ لگنے لگا

تلاش اتنا کیا روشنی کو جنگل میں

تھکن کے بعد اندھیرا چراغ لگنے لگا

تو سامنے تھا مگر کوئی اور لگ رہا تھا

پسِ خلائے محبت سراغ لگنے لگا

کمال درجہ کی شفافیت تھی آنکھوں میں

خود اپنا عکس مجھے ان میں داغ لگنے لگا

پلک پرندہ تھا، لب پھول اور زلف شجر

وہ چہرہ پہلی نظر میں ہی باغ لگنے لگا

غزل

ہجر سے دشت کو آباد نہیں رکھوں گا

عشق میں قیس کو استاد نہیں رکھوں گا

دوسری بار اگر بھیجا گیا دنیا میں

آنکھ اور سوچ کو آزاد نہیں رکھوں گا

خود سے رشتہ ہے مرا صرف ترے ہونے تک

یہ تعلق بھی ترے بعد نہیں رکھوں گا

تیری دہلیز بھی چوموں گا تو خود داری سے

ہونٹ رکھتے ہوئے فریاد نہیں رکھوں گا

تجھ کو چاہوں گا ترے سارے پرستاروں سمیت

وہم پر عشق کی بنیاد نہیں رکھوں گا

Print Friendly, PDF & Email
شاید آپ یہ بھی پسند کریں