The news is by your side.
betsat

bettilt

anadolu yakası escort bostancı escort bostancı escort bayan kadıköy escort bayan kartal escort ataşehir escort bayan ümraniye escort bayan
kaçak bahis siteleri canlı casino siteleri
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
maslak escort
istanbul escort şişli escort antalya escort
en iyi filmler
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
aviator oyunu oyna lightning rulet siteleri slot siteleri

محنتِ انساں کی قسم

کون کہہ سکتا ہے

کس وقت خُدا برہم ہو

اورپھرابرِکرم، ابرِمصیبت بن جائے

ہے کوئی علم؟

کوئی فکر؟

کوئی صاحبِ دل؟

جو بتا سکتا ہو’معروضِ مشیّت ‘کیا ہے ؟

جن غریبوں کے مکاں لے گئے بپھرے دریا

اُن کے حق میں یہ غضب ناکیِ قدرت کیا ہے ؟

کیا یہی طے ہے؟

کہ جب قہر گرے،ان پہ گرے ؟

وہ معیشت کے ہوں

یا قدرتی آفات کے زخم

بس یہی چاک گریباں ہیں جو یہ بھگتیں گے؟

مثلِ مشہور کہ ہاں ’صبرکا پھل میٹھا ہے‘

کیایہ پھل

صرف غریبوں کے لئے ہوتا ہے؟

ہم غریبوں کی ’تواضع‘کو یہی پھل ہے کیا؟

اِس جہاں گیراذیّت کا یہی حل ہے کیا؟

تجھ سے تو خیر مجھے کوئی شکایت ہی نہیں

تیری قدرت

تو ہراک کے لئے یکساں ٹہھری

یہ سوالات تو ان زہرفروشوں سے ہیں جو

فکرکے نام پہ تخریبِ خرَد بیچتے ہیں

جو غریبوں کو سکھاتے ہیں ’مشیت کے اصول‘

اورامیروں کو ’سخاوت‘کی سند بیچتے ہیں

یہ لڑائی تو ہے اُن رجعَتی طاغوتوں سے

جو کہ ’تقسیم‘کی مسند کے خُدا ٹھہرے ہیں

جو کہ دھرتی کے لئے ننگ ہیں لیکن ازخود

برسر ِعام خُدائی کی ادا ٹھہرے ہیں

بحروبر ملک خُدااست مگرقابض کون؟

کس خُداوند کا فرماں ہے کہ تم ظلم کرو ؟

کس نبی نے یہ کہا پیٹ منافع سے بھرو؟

اُس کی قدرت کے خزانے ہیں برائے ہرجاں

کون ہوتم؟ کہ جو خود کے لئے مخصوص کرو ؟

ربِ جاناں کی قسم !

محنتِ انساں کی قسم !

تم نہیں چاہتے انساں کا بھلا ہوجائے

لوگ بپھرے ہوئے پانی میں بھلے ڈوب مریں

تم تو محفوظ ہوجاگیریں بچا کراپنی

لیکن اے جملہ خبیثان و رئیسانِ زمیں!

وقت آتا ہے کہ اب تم بھی دہائی دو گے
تم کہ جو قاسمِ جمہوربنے پھرتے ہو
اپنے ہرظلم پہ اب آپ صفائی دو گے !

کون کہہ سکتا ہے

کس وقت خُدا برہم ہو

اورپھرابرِکرم، ابرِمصیبت بن جائے

ہے کوئی علم؟

کوئی فکر؟

کوئی صاحبِ دل؟

جو بتا سکتا ہو’معروضِ مشیّت ‘کیا ہے ؟

جن غریبوں کے مکاں لے گئے بپھرے دریا

اُن کے حق میں یہ غضب ناکیِ قدرت کیا ہے ؟

کیا یہی طے ہے؟

کہ جب قہر گرے،ان پہ گرے ؟

وہ معیشت کے ہوں

یا قدرتی آفات کے زخم

بس یہی چاک گریباں ہیں جو یہ بھگتیں گے؟

مثلِ مشہور کہ ہاں ’صبرکا پھل میٹھا ہے‘

کیایہ پھل

صرف غریبوں کے لئے ہوتا ہے؟

ہم غریبوں کی ’تواضع‘کو یہی پھل ہے کیا؟

اِس جہاں گیراذیّت کا یہی حل ہے کیا؟

تجھ سے تو خیر مجھے کوئی شکایت ہی نہیں

تیری قدرت

تو ہراک کے لئے یکساں ٹہھری

یہ سوالات تو ان زہرفروشوں سے ہیں جو

فکرکے نام پہ تخریبِ خرَد بیچتے ہیں

جو غریبوں کو سکھاتے ہیں ’مشیت کے اصول‘

اورامیروں کو ’سخاوت‘کی سند بیچتے ہیں

یہ لڑائی تو ہے اُن رجعَتی طاغوتوں سے

جو کہ ’تقسیم‘کی مسند کے خُدا ٹھہرے ہیں

جو کہ دھرتی کے لئے ننگ ہیں لیکن ازخود

برسر ِعام خُدائی کی ادا ٹھہرے ہیں

بحروبر ملک خُدااست مگرقابض کون؟

کس خُداوند کا فرماں ہے کہ تم ظلم کرو ؟

کس نبی نے یہ کہا پیٹ منافع سے بھرو؟

اُس کی قدرت کے خزانے ہیں برائے ہرجاں

کون ہوتم؟ کہ جو خود کے لئے مخصوص کرو ؟

ربِ جاناں کی قسم !

محنتِ انساں کی قسم !

تم نہیں چاہتے انساں کا بھلا ہوجائے

لوگ بپھرے ہوئے پانی میں بھلے ڈوب مریں

تم تو محفوظ ہوجاگیریں بچا کراپنی

لیکن اے جملہ خبیثان و رئیسانِ زمیں!

وقت آتا ہے کہ اب تم بھی دہائی دو گے

تم کہ جو قاسمِ جمہوربنے پھرتے ہو

اپنے ہرظلم پہ اب آپ صفائی دو گے !

Print Friendly, PDF & Email