The news is by your side.
betsat

bettilt

anadolu yakası escort bostancı escort bostancı escort bayan kadıköy escort bayan kartal escort ataşehir escort bayan ümraniye escort bayan
kaçak bahis siteleri canlı casino siteleri
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
maslak escort
istanbul escort şişli escort antalya escort
en iyi filmler
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
aviator oyunu oyna lightning rulet siteleri slot siteleri

راوی رستہ موڑ‘ بلوچستان کی جانب

راوی رستہ موڑ
کبھی اس شہر کی جانب ‘ جو جلتا ہے
سن زخمی آواز
جو سینے چیر رہی ہے
جھومر کی وادی میں کس نے پھینکا ہے بارود ؟؟
جھلس گئے بالَوچ
کون’پری پیکر‘ ہیں جنہوں نے ڈسے بلوچی خواب ؟؟
کون ’کرم فرما‘ ہاتھوں نے زہرکیا یہ آب؟؟
ظلم کریں عُہدوں والے اور گالی سنے پنجاب ؟؟؟؟
تَو راوی
اب تُو رستہ موڑ
ذرا اس شہر کی جانب اے بوڑھے دریا
غصیلی خلقت کو سمجھا
کہ میں تو خود روتا ہوں
دیکھ ! مری لہروں نہروں سے نکل رہی لاشیں
اپنے ہی آنچل سے پھندہ لیتی یہ بہنیں
ڈگری پر پٹرول چھڑک کر جلتا مستقبل
دیکھ ! یہ اُجڑے خواب اور خوابوں سے خالی ہر دل
جس کرسی کے پایے تیرے دل میں ہیں پیوست
میری لہروں اور ترے درّوں پر نازل مشترکہ آسیب
جن کی سنگینوں سے ادھڑے سندھ بلوچستان
جن کی خوں آشام ہوس نے لوٹا پاکستان
یار بلوچستان
وہی اپنے مجرم ہیں
راوی رستہ موڑ ‘ بلوچستان کی جانب
پھولوں کے ہمراہ
کہ سب دکھ سکھ سانجھے ہیں


نوٹ: یہ نظم علی زریون نے گزشتہ ماہ سانحہ پولیس ٹریننگ سنٹر کے موقع پرتحریر کی تھی

Print Friendly, PDF & Email