The news is by your side.
betsat

bettilt

anadolu yakası escort bostancı escort bostancı escort bayan kadıköy escort bayan kartal escort ataşehir escort bayan ümraniye escort bayan
kaçak bahis siteleri canlı casino siteleri
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
maslak escort
istanbul escort şişli escort antalya escort
en iyi filmler
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
aviator oyunu oyna lightning rulet siteleri slot siteleri

زلزلے کی بریکنگ نیوز

”کچھ محسوس کیا تم نے؟“
” نہیں!! کیوں کیا ہوا؟“
”ابھی ابھی کچھ چکر سے آئے ہیں….ایسا لگا جیسے زلزلہ آیا ہے۔“
”نہیں کچھ نہیں ہوا…. تمہارا وہم ہوگا۔“
”تم میری ہر بات کو وہم کا نام کیوں دے دیتے ہو؟“
” اس لیے کہ تمہیں ہر بات میں کچھ نہ کچھ محسوس ہونے لگتا ہے۔“
” محسوس کرنا کیا کوئی بری بات ہے؟“
” نہیں بری بات آپ کے لیے نہیں ہمارے لیے ہے۔ “
”تم جو بھی محسوس کرتے ہو ،تمہاری بلا سے …. کرتے رہو…. ہمیں اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا۔“
” وہ کیوں؟“
”اس لیے کہ تم الٹی سیدھی خبریں پتا نہیں کہاں سے سن کر آجاتے ہو اور پھر مجھے سناتے ہو۔ اب تم کچھ بھی کہو مجھے تمہاری بات پر یقین نہیں۔“
” میری بات کا یقین کرو …. ابھی ابھی زلزلہ آیا تھا۔“
” آیا ہوگا …. مجھے کیا؟“
” میں زلزلے کی بات کررہا ہوں ، حکومت کے آنے جانے کی نہیں۔“
”کیا فرق پڑتا ہے …. روز روز مرنے سے بہتر ہے ایک روز ہی مرجائیں ۔“
”یار اتنی بے حسی اور ناامیدی اچھی نہیں ہوتی۔“
”کس نے کہا کہ ناامید ہےں….روز کسی نہ کسی سانحہ یا حادثے سے گزرتے ہیں اور اپنوں کی لاشیں اٹھاتے ہیں ، غیرت مند والدین اپنی بہو بیٹیوں کی غیرت کا جنازہ اٹھاتے ہیں اور پھر روزمرہ کی طرح چلنے لگتے ہیں۔ اب اگر زلزلے نہ آئیں تو کیا من و سلویٰ اترے گا۔“
”ٹی وی لگاؤ،
ضرور وہاں کوئی بریکنگ نیوز چل رہی ہو گی“
” یہ بریکنگ نیوز سن سن کر ہی توہم بریک ہو گئے ہیں…. کسی پر کوئی اثر نہیں ہوتا۔روز شیر آتا ہے اور کسی نہ کسی کو موت کے منھ میں لے جاتا ہے اور ہم لوگ بے حسی کی تصویر بنے اپنے اپنے کاموں میں لگے رہتے ہیں۔“
” میڈیا کا کام خبر دینا ہے اور اگر وہ خبر نہیں دے گا تو کیا کرے گا؟“
”خبر ضرور دے لیکن ہر خبر کو بریک نہ کرے …. ورنہ خبریں بریک ہو ہو کر ہمارے دل و دماغ کو بریک کردیں گی۔ دن میں ایک بار کہو کہ شیر آگیا تو میں یقین کروں گا لیکن اگر تم صبح دوپہر شام شیر آگیا کا شور مچا ؤ گے تو پھر تمہاری بات پر کون یقین کرے گا!!“
”کہہ تو تم ٹھیک رہے ہو لیکن زلزلہ کون سا روز روز آتا ہے…. تمہیں میری بات کا یقین کرنا چاہیے ۔“
” میں یقین کربھی لوں تو کیا فرق پڑتا ہے…. اپنی بات کا یقین عوام کو دلا ؤ۔“
” عوام کو یقین دلانا بہت مشکل ہے…. ان سے اتنی بار تبدیلی ،انقلاب اور روٹی کپڑا اور مکان کے نام پر دھوکا دیا گیا ہے کہ اب وہ کسی کی بات پر بھروسہ کرنے کے لیے تیار نہیں۔“
” پھر حکومت کو اپنی بات کا یقین دلا دو۔“
” وہ تو اس سے بھی زیادہ مشکل کام ہے۔ کچھ بھولی اور سادہ عوام تو پھر بھی ہماری بات پر یقین کرلے لیکن حکومت کا تو سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔“
”ایک طریقہ ہے ان کو یقین دلانے کا“
”اور وہ کیا؟“
”بس بریکنگ نیوز چلانا پڑے گی۔پھر دیکھو وہ کس طرح نوٹس لیتے ہیں۔“
” لیکن میں بریکنگ نیوز کے سخت خلاف ہوں۔“
” تو پھر محسوس کرتے رہو زلزلے کے جھٹکے…. کوئی یقین نہیں کرے گا تمہاری بات کا…. “

Print Friendly, PDF & Email