The news is by your side.
Güvenilir bahis siteleri 2022
betsat
mecidiyeköy escort mecidiyeköy escort etiler escort etiler escort taksim escort beşiktaş escort şişli escort bakırköy escort ataköy escort şirinevler escort avcılar escort esenyurt escort bahçeşehir escort istanbul escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort
mariobet.biz
betwoon kayıt
deneme bonusu veren siteler
canlı casino
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
bailarinas de la hora pico Britney Shannon barely keeping whole thing in her throat Nicole Nix obtient saucissonner par un russe mec sur une table
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
gaziantep escort
gaziantep escort
modabet giriş
ankara escort escort ankara escort
Tipobet365
Canlı Kumar
istanbul evden eve nakliyat
Group of passionate teen angels lick every other Hottie babe Lou Charmelle fucking a black meat Milf Nina Elle gets fucked in dogystyle
istanbul masaj salonuistanbul masaj salonuhttp://www.escortperl.com/Gaziantep escortDenizli escortAdana escortHatay escortAydın escortizmir escortAnkara escortAntalya escortBursa escortistanbul escortKocaeli escortKonya escortMuğla escortMalatya escortKayseri escortMersin escortSamsun escortSinop escortTekirdağ escortEskişehir escortYalova escortRize escortAmasya escortBalıkesir escortÇanakkale escortBolu escortErzincan escort

آپ خود اپنی اداوٗں پہ ذرا غورکریں

جان کی امان پاؤں تو عرض کرتا ہوں کہ پندرہ برس قبل جب جہاں پناہ افغانستان پر حملہ آور ہوئے تھے تب آپ نے پوری دنیا کو خوش خبری دی تھی کہ چند ہفتوں میں دہشت گردوں کا خاتمہ کرکے ایک نئی اور پرامن دنیا کی بنیاد رکھی جائےگی تب آپ کی ہیبت سے مغلوب ہو کر تمام اسلامی و غیر اسلامی ممالک نے اس نہ ختم ہونے والی جنگ میں شمولیت کا فیصلہ کیا۔

ہفتے مہنیوں اور مہینے برسوں میں تبدیل ہوگئے مگر پرامن دنیا کا خواب، خواب ہی رہا، جو کل افغانستان تک محدود تھے وہ کراچی، لندن، میڈرڈ اور بالی پہنچ گئے۔ان کے خاتمے کے لیے آپ عراق اور لیبیا پہنچے، اس مشق کے نتیجے میں عراق تو برباد ہوا ہی مگر وہاں سے وہ عفریت برآمد ہوا کہ اس نے بغداد، استنبول، قطیف، ڈھاکا، پیرس اور برسلز دہلا دیئے۔

وہ جن اب بوتل میں جانے کو بالکل بھی تیار نہیں جو عراق سے نکلا تھا بلکہ ان کے رنگ ڈھنگ ایسے نکلے کہ پرانے جہادیوں نے کانوں کو ہاتھ لگا دیئے۔

اب پندرہ برس بعد آپ اپنی ناکامیوں کی داستان سناتے ہوئے کہہ رہے ہیں کہ اس خطرے سے نمٹنے کے لیے دنیا کو ایک ہونا ہوگا۔
اچھی بات کی، یہی خوف کا وہ ہتھکنڈہ ہے جسے آپ آج کل فروخت کر رہے ہیں۔

جناب عالی ، اس بات کی کیا ضمانت ہے کہ کل اس خطرے سے نمٹنے کی صورت میں کچھ نیا نہیں ہوگا ؟
ہاں یہ ضرور یاد رہے کہ ابھی تو وہ لوگ ہی ختم نہیں کیے جاسکے جن سے چند دنوں میں آپ دنیا کو نجات دلانے والے تھے۔

آپ اپنی اداؤں پر غور کرنا پسند کریں گے ؟ یا راوی اس بابت سکوت کو ہی پسند کرتا ہے ؟۔

بہت سے احباب مدینہ میں کی گئی دہشت گردی کی بھیانک واردات کو حرم مدنی پر براہ راست حملہ قرار دے رہے ہیں ، میرا خیال ہے کہ اس سے گریز بہتر ہے کیونکہ ایک تو اس سے عام مسلمانوں کو بہت غلط پیغام جا رہا ہے اور دوسرا یہ کہ حملہ مسجد کے قریب تعینات سیکیورٹی فورسز پر ہوا یعنی کہ ہدف طے شدہ تھا، حملہ آور کے لیے مسجد جانا قطعی مسئلہ نہیں تھا۔

ابھی تک واضح نہیں کہ ان حملوں کے پیچھے کون ہے ؟ لیکن اس وقت سعودی حکام حوثی قبائل اور دولت اسلامیہ سے حالت جنگ میں ہیں اور ان سے کچھ بعید نہیں۔ سعودی حکام، ان کی پولیس و فوج کی بابت دولت اسلامیہ کے کھلے عام مرتد ہونے کے فتاویٰ موجود ہیں، دولت اسلامیہ کو اس بات کی کوئی پروا نہیں کہ عام مسلمان ان کے بارے میں کیا سوچتے ہیں؟ علماء کیا رائے رکھتے ہیں؟ اور ان کے عمل سےاسلام اور مسلمانوں کو کیا اور کتنا نقصان پہنچے گا؟ ان کی اپنی ہی سوچ ہے جس پر پوری قوت سے جمے ہوئے ہیں۔ ان کے رویے اس قدر انتہا پسندانہ رہے ہیں کہ ڈاکٹر ایمن الظواہری کی تنظیم القاعدہ تک کو ان سے فاصلے اختیار کرنے پڑے۔

سعودی حکام کی پالیسیوں کے خلاف پہلی بڑی بغاوت اسامہ بن لادن نے کی تھی یہاں تک کے ان دنوں ریاض میں امریکی فوجیوں پر ہونے والے حملوں کو انھوں نے خوب سراہا، خود القاعدہ کے سعودی جنگجو عبدالعزیز عیسی المقرن نے سعودی سیکیورٹی اہلکاروں اور غیر ملکیوں پر دو ہزار تین اور چار میں متعدد حملے کیے۔ بعد ازاں المقرن ایک پولیس مقابلے کی نذر ہوا۔
القاعدہ نے وزیر داخلہ محمد بن نائف (جو اب ولی عہد ہیں) پر ایک خود کش حملہ بھی کرایا جو کہ ناکام رہا لیکن ان سب کے باوجود القاعدہ نے حرم مکی و مدنی میں حملوں سے ہمیشہ گریز کیا کیونکہ وہ جانتے تھے کہ مسلم امہ اس حوالے سے کتنی حساس ہے۔
دوسری طرف دولت اسلامیہ ہے جسے اپنی کسی بھی کارروائی کے لیے رائے عامہ کی پروا نہیں ہوتی اس کے سفاک عسکریت پسند وہی کرتے ہیں جسے درست سمجھتے ہیں۔
یہ امر حیران کن ہے کہ اتنی شدت رکھنے کے باوجود اسے نیا خون مسلسل مل رہا ہے۔
اس عہد کا چیلنج دولت اسلامیہ بن چکی لیکن افسوس کہ اس سے نمٹنے کے لیے روایتی طریقے اختیار کیے جا رہے ہیں جس کی وجہ سے وہ ابھی بھی مؤثر انداز میں اپنی دہشت گرد کارروائیاں بیک وقت کئی ممالک میں جاری رکھے ہوئے ہیں۔
گزشتہ دس دنوں کے دوران دولت اسلامیہ استنبول، ڈھاکا و بغداد کو خون میں نہلا چکی ہے ایسے میں یہ ہلاکت خیز حملے بتا رہے ہیں کہ ابھی کشت و خون کا سیلاب مزید بہے گا اور مستقبل کئی خدشات لیے ہمارے آگے کھڑا ہے۔
نجانے اس کا انجام کیا ہوگا ؟

Print Friendly, PDF & Email
شاید آپ یہ بھی پسند کریں