The news is by your side.
betsat

bettilt

anadolu yakası escort bostancı escort bostancı escort bayan kadıköy escort bayan kartal escort ataşehir escort bayan ümraniye escort bayan
kaçak bahis siteleri canlı casino siteleri
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
maslak escort
istanbul escort şişli escort antalya escort
en iyi filmler
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
aviator oyunu oyna lightning rulet siteleri slot siteleri

مالی نقصان تو جانی نقصان کا صدقہ ہوتا ہے

جب ہمیں کسی قسم کا کوئی بھی نقصان بہنچتا ہے تو ہم شور مچانا شروع کر دیتے ہیں لیکن ہم یہ نہیں سوچتے کہ ہو سکتا ہے کہ اس صدمہ کے پیچھے چُھپے اسرارورموز کو جان کر ہم کہیں کہ شکر ہے یہ ہو گیا ورنہ نہ جانے کیا کیا ہو جاتا۔ مالی و جانی نقصانات بہت دفعہ ہمارے گناہوں کا کفارہ ہوتے ہیں بہت دفعہ درجات کی بلندی لے کر آتے ہیں اور بہت دفعہ ان نقصانات میں ایسی ایسی حکمتیں پوشیدہ ہوتی ہیں کہ جن کو ہم سوچ بھی نہیں سکتے۔ حضرت امام جلال الدین رومی علیہ الرحمتہ نے ایک حکایت بیان فرمائی ہے جس کو پڑھیں اور سوچیں کہ ہم کہاں کھڑے ہیں اور ہونے والے نقصانات پر ہمارا ردِ عمل کیا ہوتا ہے اور کیا ہونا چاہیے

ایک شخص نے حضرت موسٰی علیہ السلام سے عرض کی کہ مجھے جانوروں اور پرندوں کو بولی سِکھائیں۔ آپ نے اسے منع کیا کہ تو اس کی اہلیت نہیں رکھتا لیکن اس کے اصرار پر اسے صرف دوجانوروں کتے اور مرغے کی بولی سکھا دی۔ اب ہوا یہ کہ صبح کو مرغ نے اس کے گھر سے سوکھی روٹی کا ایک ٹکڑا اٹھایا اور کھانے لگا لیکن ایک کتا بھی وہاں آ دھمکا۔

مرغ نے کہا تو فکر نہ کر کل مالک کا گھوڑا مرجائے گا اور اللہ تجھے پیٹ بھر کر کھانا کھلائے گا۔ مالک نے یہ سن کر گھوڑا بیچ دیا اور اپنے آپ کو نقصان سے بچا لیا جبکہ جس کو بیچا تھا اس کو نقصان اٹھانا پڑا کہ گھوڑا مر گیا۔ اگلے دن مالک نے یہی بات اپنے خچر اور اس سے اگلے دن اپنے غلام کے متعلق سنی تو اسی طرح خچر اور غلام کو بیچ کر خود کو پھر نقصان سے بچا لیا اور بہت خوش ہو کر کہنے لگا کہ کتنا اچھا ہوا کہ مجھے ان جانوروں کی زبان آتی ہے اور میں نے اپنی عقلمندی سے اپنے آپ کو تین بار نقصان سے بچا لیا ورنہ کیا ہوتا۔

اگلے دن یہی بات مرغے نے خود مالک کے متعلق کہہ دی کہ وہ کل مر جائے گا اور اس کے ورثا گائے ذبح کریں گے اور کھانا تقسیم ہو گا تمھیں بھی پیٹ بھر کر ملے گا۔ اب یہ شخص حضرت موسٰی علیہ السلام کی طرف بھاگا اور سارا ماجرا سنایا۔ آپ نے فرمایا قضا نے تیری طرف تین بار نقصان کے لیے ہاتھ بڑھایا جو کہ تو نے اپنی تدبیر سے لوٹا دیا اگر تو ایسا نہ کرتا تو قضا تیرے مالی نقصان سے پلٹ جاتی اور یہ بڑی مصیبت اس قدرجلدی تیرے سامنے آ کر نہ کھڑی ہو جاتی۔

Print Friendly, PDF & Email