The news is by your side.
betsat

bettilt

anadolu yakası escort bostancı escort bostancı escort bayan kadıköy escort bayan kartal escort ataşehir escort bayan ümraniye escort bayan
kaçak bahis siteleri canlı casino siteleri
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
maslak escort
istanbul escort şişli escort antalya escort
en iyi filmler
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
aviator oyunu oyna lightning rulet siteleri slot siteleri

سب بیچ دے! نیا پاکستان نہیں چاہیے

’’نواز شریف صاحب نے پی آئی اے کے تین ملازمین کی شہادت کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے استعفیٰ دے دیا۔‘‘
’’یہ آپ کی خواہش ہے یا خبر!!‘‘
’’خبر تو ہو نہیں سکتی اسی لیے خواہش کو ہی خبر بنایا ہے۔‘‘
’’بھلا وہ کیوں استعفیٰ دیں وہ ’ذمہ دار‘ نہیں۔‘‘
’’وہ غیر ذمہ دار ہیں تو پھر ذمہ دار کون ہے؟کیونکہ قانون نافذ کرنے والے اداروں نے بھی ذمہ داری قبول کرنے سے انکار کردیا ہے۔‘‘
’’ان کی ذمہ داری ہے جو گولیوں کا نشانہ بنے ۔یہ گولیوں کے سامنے نہ آتے اور نہ یہ واقعہ پیش آتا۔‘‘
’’تمہارا مطلب ہے گھر بیٹھ کر احتجاج کرتے۔‘‘
’’جی ہاں! احتجاج کرنے کا حق صرف سیاستدانوں کے پاس ہے۔عوام یہ کام کرے گی تو اسے گولیاں اور لاٹھیاں کھانی ہوں گی۔‘‘
’’ہمارے ملک کا المیہ ہے کہ بڑے بڑے واقعات اور سانحات پیش آتے ہیں لیکن کوئی ذمہ داری قبول نہیں کرتا۔‘‘
’’ایسی بھی کوئی بات نہیں ایک جماعت ہے جو ہر واقعہ کی ذمہ داری بلاجھجھک قبول کرتی ہے۔‘‘
’’وہ کون سی جماعت ہے؟‘‘
’’طالبان اور القاعدہ ۔۔۔کم از کم ہر واقعہ کی ذمہ داری قبول کرتے ہیں چاہے کسی نے بھی کیا ہو۔‘‘
’’لیکن اس بار تو انھوں نے بھی ذمہ داری قبول نہیں کی۔‘‘
’’اسی لیے تو چیئرمین پی آئی اے نے استعفیٰ دے دیا ہے ۔‘‘
’’کیا وہ ذمہ دار ہیں؟‘‘
’’جب ذمہ دار لوگ اپنی ذمہ داری قبول نہ کریں تو ا ن کو اپنی ذمہ داری پر رہنے کا کیا حق پہنچتا ہے؟‘‘
’’یہ حق ان کو عوام نے دیا ہے۔‘‘
’’عوام نے ملک کو چلانے کا حق دیا تھا نہ کہ ملک کے اثاثوں کو بیچنے کا۔‘‘
’’پی آئی اے کی نجکاری کیے بغیر نہیں چلایا جاسکتا ۔‘‘
’’اب ایسی بات بھی نہیں ، میاں صاحب ملک چلا سکتے ہیں تو پی آئی اے کیا چیز ہے۔ ان کے پاس ایسا نسخہ خاص ہے جس پر عمل کرکے پی آئی اے کو نہ صرف بچایا جاسکتا ہے بلکہ اڑایا بھی جاسکتا ہے۔‘‘
’’ انہوں نے وہ نسخہ خاص زرداری صاحب کو دیا تھاکہ وہ نیویارک کا ہوٹل بیچ کر پی آئی اے کو کھڑا کریں ۔ ‘‘
’’میاں صاحب کے پاس تو کچھ بھی نہیں!‘‘
’’اگر کچھ ہوتا تو وہ پی آئی اے کبھی نہ بیچتے۔ خسارہ بہت بڑھ چکا ہے۔‘‘
’’خسارہ تو ملک کا بھی بہت بڑھ چکا ہے ، کہیں ملک کی بھی نجکاری تو نہیں ہوجائے گی۔ ‘‘
’’اگر اسی طرح نجکاری کا عمل جاری رہا تو وہ دن بھی دور نہیں جب ملک بھی بک جائے گا۔‘‘
’’پہلے جنگیں لڑ کر ملک پر قبضہ کیا جاتا تھا لیکن اب ملک کے اثاثہ جات پر قبضہ کیا جاتا ہے ۔ ‘‘
’’ سب بیچ دے ۔۔۔ نیا پاکستان نہیں چاہیے!!‘‘
’’سب بیچنے کے بعد سیاستدان تو ملک سے باہر چلے جائیں گے لیکن عوام ان کے قرضے نسل در نسل غلامی کی صورت اتارے گی۔‘‘
’’ اگر یہ بات ہے تو ہم اگلے الیکشن میں انہیں ووٹ نہیں دیں گے۔‘‘
’’آپ اپنا ووٹ اپنے پاس رکھیں، اگلے الیکشن تک تو یہ سب بیچ چکے ہوں گے ۔‘‘
’’اچھا اسی لیے زرداری صاحب پہلے ہی ملک سے باہر جاچکے ہیں۔‘‘
’’اور اب میاں صاحب ۔۔۔!!‘‘

Print Friendly, PDF & Email