The news is by your side.
betsat
mecidiyeköy escort mecidiyeköy escort etiler escort etiler escort taksim escort beşiktaş escort şişli escort bakırköy escort ataköy escort şirinevler escort avcılar escort esenyurt escort bahçeşehir escort istanbul escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort sakarya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort alanya escort
canlı casino
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
vip escort Bitlis escort Siirt escort Çorum escort Burdur escort Diyarbakir escort Edirne escort Düzce escort Erzurum escort Kırklareli escort
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
gaziantep escort
gaziantep escort
modabet giriş
ankara escort escort ankara escort
Tipobet365
Canlı Kumar
istanbul evden eve nakliyat
Group of passionate teen angels lick every other Hottie babe Lou Charmelle fucking a black meat Milf Nina Elle gets fucked in dogystyle

الن کلن کی باتیں: جنگ کا قاعدہ

’’ہر طرف جنگی بینڈ باجے بج رہے ہیں اور آپ ہیں کہ یہاں خاموش بیٹھے ہیں۔‘‘
’’کس کی بینڈ بج رہی ہے اور کس کا باجا بجنے کو ہے ؟کیا کوئی شادی کی تقریب ہے؟‘‘
’’ میں جنگی بینڈ باجوں کی بات کررہا ہوں، شادی والے بینڈ باجوں کی نہیں۔‘‘
’’ ہمارے یہاں تو جنگی بینڈ باجے بھی شادی میں بجتے ہیں، کیا تم نے دیکھا نہیں کتنی فائرنگ ہوتی ہے ہمارے یہاں شادیوں پر۔‘‘
’ہاں وہ تو ہے لیکن یہ شادی والی فائرنگ نہیں ۔‘‘
’’کیا فرق پڑتا ہے ، ہم تو پہلے ہی حالت جنگ میں ہیں۔ ہمارے نومولودبچے اذان کی آواز سے پہلے بندوق کی گولی کی آواز سنتے ہیں۔‘‘
’’ یہ بات تو ہے لیکن یہ باقاعدہ جنگ کی بات ہے۔‘‘
’’ پتا نہیں تم کس دنیا میں رہتے ہو؟ جنگ کا کوئی قاعدہ نہیں ہوتا جو باقاعدہ ہو۔ جہاں جس کو موقع ہاتھ لگ جاتا ہے وہ جنگ کرنے سے باز نہیں آتا۔‘‘
’’لیکن یہ جو جنگ کی باتیں ہورہی ہیں اس سے بہت تباہی پھیلے گی۔‘‘
’’ جنگیں سبق سیکھنے کے لیے ہوتی ہیں یا پھر سبق سکھانے کے لیے۔ لیکن ہم نے کسی بھی جنگ سے کچھ نہیں سیکھا۔اسی لیے یہ سب باتیں ہورہی ہیں۔‘‘
’’ کیا تم جنگ کے حق میں نہیں ہو؟‘‘
’’ کون سی جنگ ، وہ جو میڈیا پر لڑی جارہی ہے۔۔۔ عام آدمی چاہے وہ پاکستان کا رہنے والا ہو یا ہندوستان کا رہنے والا دونوں ہی اپنی روزی روٹی کی فکر میں ہیں کہ کب ان کے منھ میں نوالہ جائے تاکہ وہ زندگی کی جنگ جیت سکیں۔‘‘
’’بات تو تمہاری دل کو لگتی ہے لیکن کیا کریں ہر طرف جنگ کا شور مچا ہوا ہے۔‘‘
’’ کہا ناں یہ صرف میڈیا پر شور ہے ، عام آدمی کا اس سے کوئی تعلق نہیں۔ ‘‘
’’عام آدمی کا اس جنگ سے کیوں تعلق نہیں ، جب جنگ ہوگی تو یہی عام آدمی تو اس جنگ کا سب سے پہلے ایندھن بنیں گے۔‘‘
’’اتنا پریشان ہونے کی ضرورت نہیں، تم نے سنا نہیں جو بھونکتے ہیں وہ کاٹتے نہیں۔‘‘
’’پتا نہیں کتے نے یہ سب پڑھا ہے کہ نہیں ، کہیں وہ کاٹ لینے کی غلطی نہ کربیٹھے۔‘‘
’’کتے پڑھے لکھے نہیں ہوتے بس اپنی فطرت سے مجبور ہوتے ہیں ۔ جس نے کتے کی دُم پر پاؤں رکھا ہے وہی اس کا مالک اس کو ہڈی ڈالے گا تو خود ہی چپ ہوجائے گا۔‘‘
’’تمہارا مطلب ہے یہ سب کسی کے اشارے پر ہورہا ہے۔‘‘
’’اور نہیں تو کیا،اب تم میرا اشارہ نہیں سمجھ رہے تو کسی کا اشارہ کیا سمجھو گے؟‘‘
’’اچھا تو پھر یہ جو دھرنا ہونے والا ہے یہ بھی کسی کے اشارے پر ہے؟‘‘
’’اس کے بارے میں کچھ بھی کہنا قبل از وقت ہوگا اس لیے ابھی حتمی طور پر کچھ نہیں کہا جاسکتا۔ ‘‘
’’لیکن میاں صاحب کو تو سازش کی بو آرہی ہے ، وہ دھرنے کو پاکستان کی ترقی میں سب سے بڑی رکاوٹ سمجھتے ہیں۔‘‘
’’میاں صاحب سمجھوتہ ایکسپریس چلانے کے چکر میں ہیں اور خان صاحب پٹری بدلنے کے چکر میں۔‘‘
’’خان صاحب کو چاہیے کہ وہ بھی اس سمجھوتہ ایکسپریس میں سوار ہوجائیں ورنہ جمہوریت جو بڑی مشکل سے پٹری پر چڑھی ہے کہیں پٹری سے اتر گئی تو پھر کسی کے کچھ ہاتھ نہیں آنے والا۔‘‘
’’آپ کب تک عوام کو سرخ بتی کے پیچھے لگا کر رکھیں گے۔ عوام کہتی ہے خود بھی کھاؤ اور ہمیں بھی کھانے دو۔‘‘
’’اس طرح تو ملک کبھی بھی نہیں چل سکتا۔‘‘
’’اتنے سالوں سے چل تو رہا ہے ۔۔۔ تو کیا ایسے ہی چل رہا ہے۔‘‘
’’کھاؤ پیو عیش کرو، اور جب ختم ہوجائے مزید اُدھار لے لینا۔لیکن یہ ’’ترقی‘‘ کا سفر نہیں رکنا چاہئے۔۔۔ سمجھے!!‘‘

Print Friendly, PDF & Email
شاید آپ یہ بھی پسند کریں