The news is by your side.
betsat

bettilt

anadolu yakası escort bostancı escort bostancı escort bayan kadıköy escort bayan kartal escort ataşehir escort bayan ümraniye escort bayan
kaçak bahis siteleri canlı casino siteleri
kralbet betturkey 1xbetm.info wiibet.com tipobet deneme bonusu veren siteler mariobet supertotobet bahis.com
maslak escort
istanbul escort şişli escort antalya escort
en iyi filmler
etimesgut escort eryaman escort sincan escort etlik escort keçiören escort kızılay escort çankaya escort rus escort demetevler escort esat escort cebeci escort yenimahalle escort
aviator oyunu oyna lightning rulet siteleri slot siteleri

الن کلن کی باتیں: ابھی تو پارٹی شروع ہوئی ہے

” بھیا تیر کمان سے نکل گیا….“
” واقعی سانحہ کارساز کے شہدا کی یاد میں ہونے والے رقص سے تو یہی لگتا ہے۔“
” بھیا ’پارٹی‘ ہے تو رقص تو ہوگا ہی…. ماتم تو ہونے سے رہا۔“
” ٹھیک کہتے ہو ماتم تو عوام کرتی ہے، پارٹی تو بس ناچ سکتی ہے یا پھر عوام کو نچا سکتی ہے۔“
” تم نے دیکھا لیاری کی بدحالی کا تذکرہ ایسے کیا گیا جیسے گذشتہ تین عشروں سے سندھ میں نواز لیگ کی حکومت تھی۔“
” ابھی توبس پارٹی شروع ہوئی ہے…. تم بس دیکھتے جاؤ یہ پارٹی کہاں کہاں جاتی ہے۔“
” کہیں جائے نہ جائے لیکن اپنے گھر ضرور جائے ۔“
” خود تو گھر کا رستہ بھول گئے ہیں اور اب چاہتے ہیں کہ کسی اور کو بھی گھر سے نکال باہر کریں۔“
” صرف چار مطالبات ہیں اگر پورے نہ ہوئے تو لانگ مارچ ہوگا۔“
”اور یہ مارچ اتنا لانگ ہوگا کہ نواز لیگ کی حکومت ختم ہوجائے گی۔“
” مگر وہ کیسے؟“
” سیدھی سی بات ہے لانگ مارچ جب تک شروع ہوگا حکومت کی مدت پانچ سال تب تک ختم ہوچکی ہوگی۔“
”نہیں تحریک انصاف پانچ سال کی مدت ختم نہیں ہونے دے گی۔“
” شیر تیر سے شکار نہیں ہو رہا تو بلا کیا کرلے گا۔“
”یہ تم نے زبر والے بَلے کا ذکر کیا ہے یا زیر والے بِلے کا؟“
” دونوں ہی زبر زیر ہوچکے ہیں۔“
” تیر تو بس پتنگوں کے کٹنے پر ہی خوش ہے اور بو کاٹا کا شور مچارہا ہے اور دوسری طرف بَلا اپنی فارم میں نہیں۔“
” اگر یہی حال رہا تو شیر سب کھا جائے گا۔“
” شیر تو آیا ہی کھانے کے لیے ہے لیکن جس نے انصاف دلانا تھا وہ ترازو میں لوگوں کو ایمان و تقویٰ بانٹ رہے ہیں۔“
” اسی لیے لوگ ان کو کھال دیتے ہیں لیکن ووٹ نہیں اور جن کو ووٹ دیتے ہیں ان کو کھال نہیں دیتے۔“
” اگر یہی حال رہا تو اگلے پانچ سال بھی اس جنگل میں انھی شیروں کی حکومت ہوگی۔“
” تم دیکھنا بہت جلد جنگل میں منگل ہوگا۔“
” وہ کیسے؟جہاں پارٹی تبدیلی نہ لاتی ہوبلکہ پارٹی تبدیل ہوتی ہو وہاں کیسے تبدیلی آسکتی ہے؟“
” میں نے کب تبدیلی کی بات کی ہے؟ میں تو کہہ رہا ہوں کہ جنگل میں منگل ہوگا۔“
” مطلب؟“
”جب جنگل میں شکاری دور دور تک نہ ہو اور کوئی شیر کا دشمن بھی نہ ہو تو پھر پتا ہے کیا ہوتا ہے؟“
” شیر خود اپنا دشمن ہوتا ہے۔“
” صحیح سمجھے اور ابھی وقت ہے پارٹی کا…. “
” چلو چل کر کسی پارٹی میں شامل ہوجائیں تاکہ پارٹی شروع ہوسکے

Print Friendly, PDF & Email